کراچی کے ایک مقامی ہوٹل ميں سندھ پوليس کے تھانہ کلچر میں بہتری کے حوالے سے سیمینار کے مہمان خصوصی آئی جی سندھ اے ڈی خواجہ نے خطاب میں کہا کہ محکمے کو ٹھیک کرنے کے لئے جو ہو سکتا تھا، وہ کیا، تھانے میں لوگوں کے ساتھ وہی پرانا سلوک ہوتا ہے، ہم آج بھی وہیں کھڑے ہیں جہاں میرے آئی جی بننے سے پہلے تھے۔

آئی جی سندھ کا مزید کہنا تھا کہ ہر سطع کی عوام تک پہنچے بغیر جرائم کا خاتمہ نہیں کر سکتے، پولیس میں کمپیوٹرائزنگ کا نظام شروع ہو چکا ہے۔ ایڈیشنل آئی جی کراچی مشتاق مہر کا کہنا تھا کہ عام آدمی کا مطالبہ ہے کہ سٹریٹ کرائمز پر قابو پایا جائے، اچھا ایس ایچ او ہو تو اسکی لمبی پوسٹنگ پر کوئی مسئلہ نہیں ہے۔ معروف صنعتکار ایس ایم منیر نے آئی جی سندھ اے ڈی خواجہ کی خدمات کو سراہتے ہوئے کہا کہ سندھ میں لگنے والے کس آئی جی نے کتنے پیسے بنائے سب جانتا ہوں لیکن اے ڈی خواجہ جیسے ایماندار افسر کی تعیناتی خوش آئند ہے۔

SHARE

LEAVE A REPLY