امریکا کے شہرنیویارک میں ایک مسافر ٹرین پڑی سے اتر گئی جس کے نتیجے میں کم سے کم 100 افراد زخمی ہوگئے۔

برطانوی خبر رساں ادارے رائٹرز کی رپورٹ کے مطابق نیویارک کے فائر ڈپارٹمنٹ کا کہنا تھا کہ حادثے کے فوری بعد ریسکیو کا عملہ اٹلانٹک ٹرمینل پر پہنچ گیا تھا۔

ڈپٹی اسسٹنٹ چیف ڈان ڈونوگیو نے حادثے کے مقام پر میڈیا کو بریفنگ دیتے ہوئے کہا کہ زخمیوں کی حالت خطرے سے باہر ہے تاہم 11 افراد کو جائے حادثہ سے ہسپتال منتقل کیا گیا۔

ان کا مزید کہنا تھا کہ حادثے کا شکار ہونے والی ٹرین میں 600 سے 700 کے درمیان مسافر سوار تھے۔

نیویارک کے گورنر انیڈریو نے بریفنگ کے دوران کہا کہ ٹرین فار روکوے سے آرہی تھی تاہم وقت پر بریک نہ لگنے جبکہ اس کی رفتار آہستہ ہونے کے باوجود وہ ایک بلاک (ٹرین کو رکنے کیلئے استعمال ہونے والا بلاک) سے ٹکرا کر پٹری سے نچے اُتر گئی۔

فائر ڈپارٹمنٹ نے سماجی رابطے کی سائٹ ٹوئٹر پر اپنے پیغام میں بتایا کہ حادثے میں 103 افراد زخمی ہوئے، 6 بوگیوں پر مشتمل ٹرین کی پہلی دو بوگیاں بری طرح متاثر ہوئی ہیں اور اسٹیشن کا متعلقہ حصہ، اور ٹرینوں کو ان کے درست مقام پر روکنے والا بلاک تباہ ہوگیا۔

متاثرہ ٹرین کے ایک مسافر کا کہنا تھا کہ ٹرین کے پڑی سے اُتر جانے کے بعد ہر جانب افراتفری کا ماحول اور زخمیوں کا خون خوف زدہ کرنے والا تھا۔

دوسری جانب میٹروپولٹن ٹرانسپورٹیشن اتھارٹی کے چیئرمین ٹام پرینڈورگسٹ کا کہنا تھا کہ حادثے کے ذمہ دار ممکنہ طور پر انجینئر ہیں جو بلاک سے قبل ٹرین کو روکنے میں ناکام رہے۔

ان کا کہنا تھا کہ جس وقت ٹرین کو حادثہ پیش آیا اس کی رفتار 10 سے 15 میل فی گھنٹہ تھی، جو معمول کی رفتار ہے۔

انھوں نے بتایا کہ حادثے کی وجہ سے ریلوے ٹریک پر کوئی بڑی رکاوٹ نہیں آئی، اس سے قبل ادارے کے افسران کا کہنا تھا کہ ان کا عملہ ٹریک کی بحالی کے کام میں مصروف ہے اور اسے جلد بحال کردیا جائے گا۔

خیال رہے کہ گذشتہ سال ستمبر میں نیوجرسی ٹرانزٹ ٹرین ہوبوکن میں حادثے کا شکار ہوگئی تھی جس میں ایک خاتون ہلاک اور 114 افراد زخمی ہوگئے تھے، زخمیوں میں ایک انجینئر بھی شامل تھا

SHARE

LEAVE A REPLY