عوامی مسلم لیگ کے سربراہ شیخ رشید احمد نے 2017 کو ملکی سیاست کا اہم ترین سال قرار دیتے ہوئے دعویٰ کیا ہے کہ پاکستان پیپلز پارٹی (پی پی پی) کے شریک چیئرمین آصف علی زرداری اور وزیراعظم نواز شریف 2018 کے انتخابات میں اتحادی ہوں گے۔

ڈان نیوز کے پروگرام ‘نیوز آئی’ کو دیئے گئے ایک خصوصی انٹرویو میں شیخ رشید کا کہنا تھا کہ اگر زرداری اور نواز شریف کی تقریر کو دیکھا جائے تو وہ ایک ہی سکے کے دو رُخ ہیں۔

انھوں نے کہا کہ اس وقت آصف علی زرداری، چیئرمین بلاول بھٹو زرداری پر بھاری ہیں، لہذا بلاول کو چاہیئے کہ اپنی والدہ اور نانا کی سیاست کو زندہ کریں، ورنہ ان کے لیے خود سیاسی طور پر زندہ رہنا مشکل ہوجائے گا۔

ان کا کہنا تھا کہ ‘جب زرداری نوازشریف سے ملیں گے تو وہ ڈاکٹر عاصم حسین سمیت دیگر مقدمات میں خود کو پرسکون محسوس کرتے ہوئے انہیں اپنے ساتھ اتحاد میں شامل کریں گے’۔

شیخ رشید کا کہنا تھا کہ آصف زردای کے پاس اس وقت 2 آپشنز موجود ہیں، جن میں پہلا آپشن سندھ میں پیپلز پارٹی کو مکمل آزادی دینا، جبکہ دوسرا آپشن پنجاب میں ن لیگ سے نشستیں حاصل کرنا ہے تاکہ اپنے لوگوں کو واپس لا سکیں۔

انھوں نے دعویٰ کیا کہ یہ سال سیاسی لحاظ سے بہت ہی دلچسپ ثابت ہوگا اور جب پیپلز پارٹی اور ن لیگ کا آپس میں اتحاد قائم ہوگا تو جمیعت علمائے اسلام (ف) کے سربراہ مولانا فضل الرحمان بھی اس میں شامل ہوجائیں گے تاکہ سیاست کا دائرہ خیبر پختونخوا تک پھیلایا جاسکے۔

ان کا مزید کہنا تھا کہ ابھی تو سال کا صرف آغاز ہوا ہے، آئندہ مہینوں میں ملکی سیاست اپنے عروج پر ہوگی۔

یاد رہے کہ سابق صدر آصف علی زرداری 18 ماہ کی خود ساختہ جلا وطنی کے بعد 23 دسمبر کو پاکستان واپس آئے تھے، کراچی پہنچنے پر کارکنان سے خطاب میں انہوں نے عندیہ دیا تھا کہ وہ 27 دسمبر کو مستقبل کے لائحہ عمل کے حوالے سے اہم اعلان کریں گے۔

بعدازاں 27 دسمبر 2016 کو سابق وزیراعظم بینظیر بھٹو کی 9 ویں برسی کے موقع پر جلسے سے خطاب کرتے ہوئے پیپلز پارٹی کے شریک چیئرمین آصف علی زرداری نے کہا تھا کہ ‘میں نواب شاہ سے اپنی بہن عذرا فضل پیچوہو کی نشست پر جبکہ بلاول بھٹو زرداری لاڑکانہ سے ایاز سومرو کی نشست پر انتخابات میں حصہ لیں گے اور اسی پارلیمنٹ کا حصہ بنیں گے’۔

سابق صدر کی وطن واپسی سے کچھ گھٹنوں پہلے سندھ رینجرز نے مصدقہ اطلاعات کی بنیاد پر مجرمانہ سرگرمیوں میں ملوث افراد کے سہولت کاروں کے خلاف کراچی کے 2 مقامات پر کارروائی کا دعویٰ کیا تھا، جبکہ چھاپے کے دوران سیکیورٹی ادارے نے بڑے پیمانے پر اسلحہ بھی برآمد کیا تھا۔

رینجرز کی جانب سے یہ کارروائی سابق صدر اور پیپلز پارٹی کے شریک چیئرمین آصف علی زرداری کے 18 ماہ بعد وطن واپسی سے صرف چند گھنٹے پہلے کی گئی جس سے سیاسی حلقوں میں تشویش کی لہر پیدا ہوئی۔

تاہم ان کارروائیوں کے بعد وزیراعلیٰ سندھ کے مشیر اطلاعات مولا بخش چانڈیو نے مسلم لیگ (ن) کے خلاف کھلی جنگ کا اعلان کرتے ہوئے کہا تھا کہ مفاہمت نواز شریف نہیں بلکہ جمہوریت کے ساتھ ہے، ن لیگ کو اب جانا ہی پڑے گا۔

‘عدالت سے جلد کرپشن کا جنازہ نکلے گا’
سپریم کورٹ آف پاکستان میں جاری پاناما لیکس کیس سے متعلق بات کرتے ہوئے شیخ رشید نے پیش گوئی کی کہ ن لیگ کی حکومت چاہے کچھ بھی کرلے، لیکن احتساب سے نہیں بچ سکتی اور جلد عدالت سے کرپشن کا جنازہ نکلے گا۔

ان کا کہنا تھا کہ کیس میں قطری شہزادے کے خط نے نہ صرف حکومت بلکہ ہر پاکستانی کو بدنام کیا ہے، تاہم اگر نواز شریف کمائی کو جائز ثابت کردیں تو وہ اپنا کیس واپس لے لیں گے۔

SHARE

LEAVE A REPLY