فاٹا اصلاحات کمیٹی کے سربراہ سرتاج عزیز نے میڈیا بریفنگ میں کہا ہے کہ فاٹا سے ایف سی آر کا کالا قانون ختم کرنے کے لئے پانچ سالہ پروگرام ترتیب دیا ہے۔ جس کے تحت فاٹا میں انتخابات اور تمام اصلاحات ہوں گی۔

فاٹا اصلاحاتی کمیٹی کے سربراہ مشیر خارجہ سرتاج عزیز نے وفاقی وزیر عبدالقادر بلوچ اور وزیر مملکت مریم اورنگزیب کے ہمراہ میڈیا کو بریفننگ دیتے ہوئے کہا ہے کہ فاٹا کو قومی دھارے میں لانے کے لئے 5 سالہ پروگرام ترتیب دیا ہے۔ ان کا کہنا تھا کہ فاٹا کی بحالی کے لئے 321 ارب روپے کا اضافی بجٹ بھی دیا جائے گا۔ علاقے میں ایف سی آر کو ختم کرکے نیا رواج ایکٹ نافذ کیا جائے گا۔فاٹا اصلاحات کمیٹی کے سربراہ سرتاج عزیز نے میڈیا بریفنگ میں کہا ہے کہ فاٹا سے ایف سی آر کا کالا قانون ختم کرنے کے لئے پانچ سالہ پروگرام ترتیب دیا ہے۔ جس کے تحت فاٹا میں انتخابات اور تمام اصلاحات ہوں گی۔

فاٹا اصلاحاتی کمیٹی کے سربراہ مشیر خارجہ سرتاج عزیز نے وفاقی وزیر عبدالقادر بلوچ اور وزیر مملکت مریم اورنگزیب کے ہمراہ میڈیا کو بریفننگ دیتے ہوئے کہا ہے کہ فاٹا کو قومی دھارے میں لانے کے لئے 5 سالہ پروگرام ترتیب دیا ہے۔ ان کا کہنا تھا کہ فاٹا کی بحالی کے لئے 321 ارب روپے کا اضافی بجٹ بھی دیا جائے گا۔ علاقے میں ایف سی آر کو ختم کرکے نیا رواج ایکٹ نافذ کیا جائے گا۔

وفاقی وزیر سیفران جنرل عبدالقادر بلوچ کا کہنا تھا کہ فاٹا کو خیبر پختون خوا میں شامل کرکے ہر سطح کے انتخابات میں فاٹا کو شامل کیا جائے گا۔ گورنر خیبر پختونخوا اقبال ظفر جھگڑا کا کہنا تھا کہ قبائلی علاقہ جات کی اصلاحات کا آغاز آئی ڈی پیز کی بحالی کے عمل سے ہی شروع ہوگیا تھا تاہم مئی 2017 تک آئی ڈی پیز کی واپسی بھی مکمل کر لی جائے گی

وفاقی وزیر سیفران جنرل عبدالقادر بلوچ کا کہنا تھا کہ فاٹا کو خیبر پختون خوا میں شامل کرکے ہر سطح کے انتخابات میں فاٹا کو شامل کیا جائے گا۔ گورنر خیبر پختونخوا اقبال ظفر جھگڑا کا کہنا تھا کہ قبائلی علاقہ جات کی اصلاحات کا آغاز آئی ڈی پیز کی بحالی کے عمل سے ہی شروع ہوگیا تھا تاہم مئی 2017 تک آئی ڈی پیز کی واپسی بھی مکمل کر لی جائے گی

SHARE

LEAVE A REPLY