امریکی صدر ڈونلڈ ٹرمپ کی جانب سے سفری پابندیوں کا نیا صدارتی حکم نامہ جاری

0
79

امریکی صدر ڈونلڈ ٹرمپ کی جانب سے سفری پابندیوں کا نیا صدارتی حکم نامہپیر کے روز جاری کر دیا گیا ہے اور امریکی میڈیا کے مطابق نئے حکم نامے میں پابندی کی زد میں آنے والے 7مسلمان ممالک کی فہرست میں سےعراق کو نکال دیا گیا ہے

خبر ایجنسی کے مطابق عراق کواستثنا دینے کا فیصلہ داعش کے خلاف جاری جنگ کے تناظر میں کیا گیا ہے جبکہ ایران، لیبیا،شام،صومالیہ،سوڈان اور یمن پر بدستور پابندی جاری رہے گی ۔

واضح رہے کہ امریکی صدرٹرمپ کی انتظامیہ کی جانب سے جنوری میں جاری ہونے والے سفرحکم نامے کو عدالت نے معطل کردیا تھا

امریکا کے مستقل رہائشی (گرین کارڈ ہولڈرز) اور پہلے سے قانونی ویزہ رکھنے والے بھی اس پابندی سے مستثنیٰ ہوں گے۔

وائٹ ہاؤس کا مزید کہنا تھا کہ نئے ایگزیکٹو آرڈر کے مطابق شام، ایران، لیبیا، صومالیہ، یمن اور سوڈان سے تعلق رکھنے والے شہریوں کے امریکا میں داخلے پر 90 دن کی پابندی برقرار رہے گی اور انہیں اس عرصے کے دوران امریکی ویزے جاری نہیں کیے جائیں گے۔

نئے حکم نامے کے مطابق شامی شہریوں پر بھی امریکا میں داخلے پر غیر معینہ مدت کے لیے پابندی نہیں ہوگی جیسا کہ ٹرمپ کے پہلے حکم نامے میں تھی۔

نئے ایگزیکٹو آرڈر کے مطابق امریکا کے مہاجرین کو پناہ دینے کے پروگرام کو بھی 120 روز کے لیے معطل کردیا گیا ہے البتہ وہ مہاجرین جنہیں پہلے ہی امریکی محکمہ خارجہ کی جانب سے امریکا آمد کی اجازت دی جاچکی ہیں وہ اس سے مستثنیٰ ہوں گے۔

وائٹ ہاؤس کے مطابق جب مہاجرین کے پروگرام پر پابندی ختم ہوگی تو سال 2017 کے لیے امریکا میں مہاجرین کی آمد کا حجم 50 ہزار افراد تک محدود کردیا جائے گا۔

وائٹ ہاؤس کے مطابق ان نئی پابندیوں کا اطلاق 16 مارچ سے ہوگا۔

اس خبر کی مزید تفصیلات آ رہی ہیں

SHARE

LEAVE A REPLY