اٹھاون برس سے پانی نہ پینے والا علی جنیش

0
84

مصر میں ایک 76 سالہ شخص نے گذشتہ 58 سال سے پانی نہیں پیا اور نہ چائے یا کافی کو منہ لگایا ہے مگر وہ پھر بھی زندہ وسلامت ہے۔ ہشاش بشاش زندگی گزارنے والے علی جنیش کو کبھی معالج کے پاس جانے کی ضرورت بھی پیش نہیں آئی ہے۔
علی جنیش مصر کے شمال میں واقع ایک گاؤں کے میئر ہیں۔ وہ پانی کے علاوہ پانی ملی سبزیاں آلو وغیرہ کے استعمال سے گریز کرتے چلے آرہے ہیں مگر اس کے باوجود انہیں کبھی کسی ڈاکٹر کے پاس نہیں جانا پڑا ہے۔ علی جنیش اپنی صحت کا راز بتاتے ہوئے مزاحیہ انداز میں کہتے ہیں کہ ان سے کوئی بھی ڈاکٹر رقم نہیں اینٹھ سکتا۔
علی جنیش نے بتایا کہ انہوں نے پانی کا استعمال ترک کرنے کی مشق کا آغاز 1959ء میں اپنی شادی کے 3 ماہ کے بعد کیا تھا۔ اس وقت انہیں بہت زیادہ پیاس لگتی تھی اور وہ غٹاغٹ کئی گلاس پی جاتے تھے۔ ایک ڈاکٹر کے پاس جاکر اسے مسلے سے آگاہ کیا تو ڈاکٹر نے بتایا کہ پانی نے ان کے معدے میں شدید جلن پیدا کر دی ہے۔
انہوں نے بتایا کہ اس ڈاکٹر نے یہ علاج تجویز کیا کہ جب تک میرا معدہ ٹھیک نہیں ہوجاتا میں مختصر وقت کے لیے پانی پینا چھوڑ دوں۔ پھر جب میں نے پانی پینے کی کوشش کی تو پھر میرے معدے میں جلن شروع ہوگئی۔ اس دوران میرے والد کے ایک کاشت کار دوست نے تجویز کیا کہ میں گنے کا رس پینا شروع کردوں لیکن اس سے کچھ افاقہ نہیں ہوا تو انہوں نے پھر سرخ گنے کا رس پینے کا مشورہ دیا۔ اس سے افاقہ ہوا اور میں نے خود کو بہتر محسوس کرنا شروع کر دیا۔ انہوں نے مزید بتایا کہ جب وہ حج کے لیے سعودی عرب گئے تھے تو وہاں بھی گنے کاٹ کر اپنے ساتھ لے گئے تھے اور مکہ مکرمہ اور مدینہ منورہ میں ان کا رس استعمال کرتے رہے تھے۔
علی جنیش کا کہنا تھا کہ وہ معمول کی زندگی گزار رہے ہیں اور ان کے گردوں میں کبھی کوئی تکلیف نہیں ہوئی۔ ان کے خیال میں وہ خود سے چھوٹی عمر کے لوگوں سے بھی زیادہ صحت مند ہیں

SHARE

LEAVE A REPLY