ابتدائی تحقیقات کے مطابق لاہور خود کش حملے میں آٹھ سے دس کلو بارود مواد استعمال کیا گیا، جب کہ علاقے میں ہونے والی فون کالز کا ڈیٹا بھی حاصل کرلیا گیا ہے،خود کش حملہ آور کی عمر 18 سے چوبیس سال کے درمیان تھی، ذرائع کے مطابق حملہ آور ازبک تھا۔

لاہور میں بیدیاں روڈ پر مردم شماری کی ٹیم پر ہونے والے خود کش حملے کی ابتدائی تحقیقات مکمل کرلی گئی ہے، سی ٹی ڈی حکام کے مطابق خودکش حملے میں 8 سے 10 کلو بارودی مواد استعمال ہوا، دھماکے میں موٹے والے بال بیرنگ استعمال کیے گئے

سی ٹی ڈی حکام کا مزید کہنا ہے کہ بارود کے نمونے فرانزک ٹیسٹ کے لیے بھیج دیئے گئے ہیں، جب کہ موبائل ٹاور سے فون کالز کا ریکارڈ حاصل کیا جارہا ہے۔ تحقیقاتی ٹیمیں شواہد جمع کرنے میں مصروف ہیں، حکام کے مطابق خود کش حملہ آور کی عمر اٹھارہ سے چوبیس سال کے درمیان تھی

تحقیقات کے مطابق دھماکا 7 بج کر 45 منٹ پر ہوا، حملہ آور پیدل تھا، وین کے بالکل پیچھے خود کو اڑایا، چہرے اور بالوں سے حملہ آور مقامی معلوم نہیں ہوتا، حملہ آور کا سر40فٹ اونچی عمارت کی چھت سے ملا، دھماکے میں 3موٹر سائیکل،ایک رکشہ تباہ ہوا، مردم شماری کے عملے کی2وین تباہ ہوئیں۔

SHARE

LEAVE A REPLY