کولڈ ڈرنکس دانتوں کے لئے تباہ کن ہوتی ہیں، تحقیق

0
83

کولڈ ڈرنکس کے شوقین افراد جان لیں کہ کولڈ ڈرنکس کا زیادہ استعمال دانتوں کی خوبصورتی ختم کرکے انہیں بدنما بناتا ہے۔
یہ بات سامنے آئی ہے امریکی ریاست سان ڈیاگو سے تعلق رکھنے والے ایک ڈنٹیسٹ ٹام بائیرمین کی تحقیق میں۔ بائیرمین نے اس متعلق اپنے تحقیق میں 1950 کے اس نظریے کو آزمانا چاہتا تھا جس کے مطابق 15 دن تک کسی دانت کو مشروب میں ڈبونا اس کو تباہ کرنے کے لیے کافی ہوتا ہے۔ اور مشروبات کا کثرت سے استعمال دانتوں کے ٹوٹنے کا باعث بن سکتا ہے۔
ڈاکٹر ٹام نے عمر کی تیسری دہائی میں اپنے کچھ دانت نکلوائے تھے اور تجربے کے لیے انہیں استعمال کیا۔ انہوں نے ایک دانت انرجی ڈرنک میں ڈبو دیا جبکہ دوسرا ریگولر کولڈ ڈرنک میں، تیسرا ڈائٹ مشروب جبکہ چوتھا پانی کے گلاس میں ڈال دیا۔ پھر جب 2 ہفتے بعد ٹام نے دانتوں کو باہر نکالا تو نتیجہ حیرت انگیز تھا۔
ریگولر کولڈ ڈرنک میں رکھا گیا دانت بالکل گل گیا جبکہ اسی طرح ڈائٹ مشروب میں رکھے گئے دانت کا یہ حال تو نہیں ہوا مگر اس پر بھی واضح داغ پڑچکا تھا۔ تاہم سب سے برا حال انرجی ڈرنک میں ڈبوئے گئے دانت کا ہوا اور اس کے اوپر گلابی تہہ کے ساتھ سرخ رنگ جم گیا جبکہ نچلا حصہ بھی بالکل بدل گیا۔ جبکہ پانی میں رکھے گئے دانت کو کوئی فرق نہیں پڑا تھا۔
ڈاکٹر ٹام کا کہنا تھا کہ ان مشروبات میں شامل تیزابیت دانتوں کی سطح کو برباد کرنے کا باعث بنتی ہے جو کہ انسانی جسم کا مضبوط ترین حصہ ہوتا ہے۔ ان کا کہنا تھا کہ ان مشروبات کے نتیجے میں دانتوں کی سطح ختم ہوجاتی ہے جس سے درد اور حساسیت بڑھ جاتی ہے اور ان کے ٹوٹنے کا خطرہ بڑھ جاتا ہے

SHARE

LEAVE A REPLY