،ناکے ،اسنیپ چیکنگ سمیت عبادت گاہوں سے بھی رینجرز کی سیکیورٹی ہٹالی گئی ۔تاہم حساس مقامات اور مخصوص وی آئی پیز کی سیکیورٹی برقرار رکھی گئی ہے۔
رینجرز کے خصوصی اختیارات کی مدت ختم ہو گئی مگر سندھ حکومت کی ٹال مٹول برقرار رہی۔ اس مرتبہ رینجرزاختیارات میں توسیع نہ کیے جانے پررینجرزاہلکاروں کو واپس ہیڈکوارٹربلا لیاگیا۔رینجرز کی سڑکوں سے بیرکوں میں واپسی کے بعد صوبے بھر میں اسنیپ چیکنگ،گشت اور چھاپوں کا سلسلہ رک گیا جبکہ کراچی کی چوکیاں بھی ویران ہوگئی ہیں۔
شہر کی اہم شاہراہوں اور چوکوں پر اسنیپ چیکنگ اورچھاپہ مار کارروائیوں رکنے سے سیکیورٹی خدشات بڑھ گئے ہیں۔
تاجر،صنعتکار، دیہاڑی دار مزدور ہوں یا پھر عوام ،تمام طبقات رینجرز آپریشن کو سندھ بھر ۔خصوصا کراچی میں امن کی بحالی کیلئے اہم قرار دیتے ہیں ۔ ایسے میں خصوصی اختیارات میں بروقت توسیع نہ ہونا عوامی سطح پر تشویش کا سبب ہے

SHARE

LEAVE A REPLY