بھارتی سپریم کورٹ نے پچیس برس پہلے بابری مسجد کے انہدام کے کیس میں حکمران جماعت بھارتیہ جنتا پارٹی کے اہم رہنماؤں کے خلاف مقدمہ چلانے کے احکامات جاری کر دیے ہیں۔ جن ہندو رہنماؤں کے خلاف مقدمہ چلایا جائے گا،

ان میں سابق نائب وزیر اعظم ایل کے ایڈوانی، بی جے پی کے سابق صدر مرلی منوہر جوشی اور وفاقی وزیر اُوما بھارتی بھی شامل ہوں گی۔ چھ دسمبر انیس سو بانوے میں بابری مسجد کو منہدم کرنے کے بعد ہندو مسلم فسادات پھوٹ پڑے تھے، جن کے نتیجے میں دو ہزار سے زائد افراد ہلاک ہوئے تھے۔

SHARE

LEAVE A REPLY