افغان عسکریت پسندوں نےدعویٰ کیا ہے کہ افغان طالبان کے سینیئر رہنما کو دولت اسلامیہ (داعش) نے پشاور میں قتل کردیا ہے۔

افغان طالبان ذرائع کا کہنا ہے کہ مولوی داؤد اور دیگر دو افراد کو پاکستان کے اندر مارا گیا جبکہ طالبان ترجمان ذبیح اللہ مجاہد نے مولوی داؤد کی ہلاکت کی تصدیق کی۔

خبر رساں ادارے عماق اور رائٹرز کے مطابق داعش نے کسی کا نام لیے بغیر طالبان رہنما کو قتل کرنے کی ذمہ داری قبول کی تھی جبکہ پشاور میں گزشتہ تین ہفتوں کے دوران تین افغانیوں اور ایک پاکستانی مولودی پر کم ازکم چار حملے ہوئے ہیں جس کے نتیجے میں 6 افراد جان سے گئے تھے۔

کیپٹل سٹی پولیس نے تسلیم کیا کہ پاکستانی مولانا کے خلاف ہونے والا حملہ داعش کا تھا، دوروز قبل چمکنی پولیس کی حدود توحید آباد کے علاقے میں افغان مولانا کو ایک گاڑی میں نشانہ بنایا گیا۔

پولیس کے مطابق اس حملے میں ہلاک ہونے والے افراد کی شناخت مولوی سیف اللہ اور مولوی خاکسار کے نام سے ہوئی اور ان کے ڈرائیور حبیب اللہ زخمی ہوگئے تھے۔

پولیس نے افغان شہری کے قتل کی تصدیق کی لیکن ان میں سے کسی کی شناخت مولوی داؤد کے نام سے نہیں ہوئی۔

SHARE

LEAVE A REPLY