پندرہ مئی 1957ء برطانیہ نے پہلے ہائیڈروجن بم کا تجربہ کیا

0
81

ہائیڈروجن بم  مرکزی یا جوہری اسلحہ (نیوکلیئر ویپن) سے تعلق رکھنے والے بم (بـم) کی ایک قسم ہے۔ مرکزی اسلحہ کی دو بنیادی اقسام ہیں
ایک انشقاقی اور
دوسری ائتلافی
پہلی انشقاقی قسم کو جوہری بم (ایٹم بـم) کہا جاتا ہے جس کے ليے دیکھیے مرکزی اسلحہ

دوسری ائتلافی قسم کو ہائیڈروجن بم (ہائڈروجن بـم) کہا جاتا ہے۔ اور یہ پہلی انشقاقی قسم کی نسبت ہزار گنا زیادہ تباہ کن صلاحیت رکھتے ہیں۔ انکو ‘ ہائیڈروجن بم (ہائڈروجن بم)’ کے علاوہ حرمرکزی بم  اور ا‏ئتلافی بم بھی کہتے ہیں۔ کہا جاتا ہے (درست کہ غلط) کہ صرف 9 ممالک؛ امریکہ، برطانیہ، روس، چین، فرانس، ہندوستان پاکستان، شمالی کوریا اور اسرائیل ایسے ہیں جو ہائیڈروجن بم رکھتے ہیں۔

مرکزی اسلحہ جس کو عام طور پر جوہری اسلحہ یا جوہری ہتھیار بھی کہا جاتا ہے، ایک ایسا اسلحہ ہے کہ جو اپنی تباہ کاری کی صلاحیت یا طاقت، انشقاق  یا اتحاد جیسے مرکزی تعاملات (نیوکلیئر ری ایکشنز) سے حاصل کرتا ہے۔ اور انشقاق اور ائتلاف (اتحاد) جیسے مرکزی طبیعیاتی عوامل سے توانائی اخذ کرنے کی وجہ سے ہی ایک چھوٹے سے مرکزی اسلحہ کا محصول (یعنی اس سے نکلنے والی توانائی یا  ایک بہت بڑے روائتی قـنبلہ کے مقابلے میں واضع طور پر زیادہ ہوتی ہے، اور ایسا صرف ایک بم یا بم ہی تمام کا تمام شہر غارت کرنے کی طاقت رکھتا ہے

SHARE

LEAVE A REPLY