تئسویں برسی مرحوم رضا ھمدانی
9 جولائی 1994《یوم_ وفات》
ادب کی دنیا کا ایک معتبر نام “رضا ھمدانی”
جنہیں پہلا ایوارڈ 1977 میں یونیسکو کی جاپانی شاخ کی طرفسے انکی کہانیوں کے مجموعے “الول بلول” پر ملا۔ جبکہ انکی زندگی کا آخری ایوارڈ حکومت پاکستان کی طرفسے “تمغہء حسن کارکردگی ” تھا۔
اس دوران انہیں انکی ادبی خدمات پر ان گنت ایوارڈوں سے نوازا گیا جن میں انکی تصانیف “رحمن بابا” پر پاکستان رائٹرز گلڈ ایوارڈ ‘
“سائیں احمد علی پشوری” پر اباسین آرٹس کونسل ایوارڈ ‘ آدم جی ‘ حبیب بینک ‘ ایران کلچرل سنٹر اور ھمدرد فاونڈیشن ایوارڈز شامل ھیں۔
مرحوم کو بیک وقت اردو’ پشتو’ ھندکو’ فارسی اور عربی زبانوں پر ملکہ حاصل تھا۔ شاعر’ ادیب’ محقق اور صحافت کے شعبے میں ایک مستند کالم نویس ھونے کے علاوہ بہت کم لوگوں کو علم ھے کہ وہ حافظ_ قرآن بھی تھے۔
اپنے لہو سے دھو کے ھی اجلا بنے گا تن
پیغمبری کا راز تو قربانیوں میں ھے۔
فارغ تعلیوں کا میں قائل نہیں مگر’
اک اپنا یار بھی تو ھمہ دانیوں میں ھے۔

SHARE

LEAVE A REPLY