مظہر حسن مصطفی اکبر
سبط احمد کا دلربا اکبر

کیا قصیدہ تراسنائوں میں
تو ہے ادراک سے وراءاکبر

بحرِ شبیر و خانہءِ زھرا
خاص داور کی تھے عطا اکبر

پھر تو ملتی نہیں رضائے نبی
تیری دادی ھو گر خفا اکبر

تو دعا جو کرے مرے حق میں
مجھ کو پل میں ملے شفا اکبر

فضلِ معبود سے مرے گھر میں
پھر مجالس تری بپا اکبر

شفقتِ بنتِ مصطفٰی کیلئے
تیرا کرتے ھیں تذکرہ اکبر

ہے بلال آلِ مصطفٰی کا غلام
اس کے دل میں ہے تو بسا اکبر

بلال رشید

SHARE

LEAVE A REPLY