کابل: ماتمی جلوس پر خودکش حملہ کیا گیا

0
125

افغانستان کے دارالحکومت کابل میں منگل کی رات افغان سکیورٹی افواج کی وردیاں پہنے کم از کم تین مسلح افراد نے ایک شیعہ زیارت گاہ کے اندر گھس کر فائر کھول دیا، جس وقت مذہبی تقریب میں سینکڑوں افراد جمع تھے۔

عینی شاہدین نے دعویٰ کیا ہے کہ اُنھوں نے ایک دھماکے کی آواز بھی سنی ہے۔ عینی شاہدین نے افغانستان کے ’طلوع نیوز ٹیلیویژن چینل‘ کو بتایا کہ ایک خودکش حملہ آور نے دھماکہ کیا جب کہ دوسرے کو اسکیورٹی افواج نے فائر کرکے ہلاک کردیا۔ خیال کیا جاتا ہے کہ تیسرا مسلح شخص ابھی تک ’کارت سخی زیادت گاہ‘ کے علاقے کے اندر یرغمالیوں سمیت چھپا بیٹھا ہے۔

ہلاکتوں کے بارے میں اکا دکا رپورٹیں موصول ہو رہی ہیں۔ زخمیوں کو جلد از جلد منتقل کرنے کے لیے زیارتگاہ کے باہر متعدد ایمبولنس موجود ہیں۔

منگل کو محرم کی نو تاریخ ہے، جو اسلامی کیلنڈر کا پہلا مہینہ ہے۔ دنیا بھر کے شیعہ حضرات ان جلوسوں میں بڑی تعداد میں شرکت کرتے ہیں، تاکہ پیغمر اسلام کے نواسے کی ہلاکت پر ماتم کیا جائے، جن کا اسی ماہ کی 9 اور 10 تاریخ کو قتل ہوا۔

حملے سے قبل، شہر میں سخت سکیورٹی تھی۔ افغان حکومت نے شیعہ برادری سے کہا ہے وہ سڑکوں پر بڑے جلوس نہ نکالیں، لیکن حملے کے خوف کے پیش نظر، اپنی مساجد اور زیات گاہوں کے اندر رہیں۔

SHARE

LEAVE A REPLY