افغانستان میں مزار پر حملہ، 14 افراد ہلاک

0
139

افغانستان کے دارالحکومت کابل میں نامعلوم مسلح افراد نے ایک مزار میں عاشور کے حوالے سے جاری مجلس میں فائرنگ کرکے 14 افراد کو ہلاک اور 36 کو زخمی کردیا۔

فرانسیسی خبر رساں ادارے اے ایف پی کی ایک رپورٹ کے مطابق افغان وزارت داخلہ کے ترجمان صدیق صدیقی کے مطابق ‘تین حملہ آوروں نے حملہ کیا تھا جن کو مقابلے کے دوران ہلاک کردیا گیا’۔

واقعے میں ہلاک ہونے والے افراد کی تفصیلات بتاتے ہوئے ترجمان کا کہنا تھا کہ حملے میں 13 شہری اور 1 پولیس اہلکار ہلاک جبکہ 36 افراد زخمی ہوئے۔

دوسری جانب غیر ملکی خبر رساں اداروں کا کہنا ہے کہ حملہ آور تاحال مزار میں موجود ہیں اور انھوں نے متعدد افراد کو یرغمال بھی بنا رکھا ہے۔

افغان خبر رساں ادارے ‘طلوع نیوز’ کے مطابق پولیس نے واقعے کی اطلاع ملتے ہی مذکورہ مزار کو گھیرے میں لے لیا، یہ مزار کابل یونیورسٹی کے قریب قائم ہے۔

اس سے قبل افغان خبر رساں ادارے ‘خاما’ کی ایک رپورٹ میں کہا گیا ہے کہ مسلح حملہ آورں نے یوم عاشور کے حوالے سے جاری ایک مجلس میں حملہ کیا جس میں کم سے کم درجنوں افراد زخمی ہوگئے ہیں جبکہ متعدد افراد کے ہلاک ہونے کی بھی اطلاعات ہیں۔

دسمبر 2014 میں امریکا کی اتحادی نیٹو افواج کے انخلاء کے بعد سے افغانستان میں طالبان کی جانب سے سیکیورٹی فورسز اور دیگر اہم مقامات پر حملوں میں اضافہ ہوگیا ہے۔

واضح رہے کہ افغانستان میں 1996 سے 2001 کے دوران افغان طالبان نے افغانستان میں اپنی حکومت امارت اسلامیہ قائم کی تھی اور وہ ایک مرتبہ پھر ملک کا کنٹرول حاصل کرنے کے لیے جنگ میں مصروف ہیں۔

SHARE

LEAVE A REPLY