غذا میں کاربوہائیڈریٹس کے استعمال میں کمی لانی چاہئے

0
510

آلو اور ناشتے میں کھائے جانے والے سیریلز کا بہت زیادہ استعمال امراض قلب کا خطرہ بڑھاتے ہیں۔

یہ بات چیک ریپبلک میں ہونے والی ایک طبی تحقیق میں سامنے آئی۔

ماساریک یونیورسٹی کی تحقیق میں 16 سال تک 42 ممالک میں لوگوں کی غذائی عادات کا جائزہ لے کر امراض قلب اور کولیسٹرول لیول میں اضافے کو دیکھا گیا۔

تحقیق میں بتایا گیا کہ دودھ سے بنی مصنوعات اور گوشت دل کے امراض کا خطرہ اتنا نہیں بڑھاتے جتنا رام طور پر تصور کیا جاتا ہے، بلکہ آلو سیریلز وغیرہ اس کا بڑا سبب بنتے ہیں۔

تحقیق کے مطابق لوگوں کو اپنی غذا میں کاربوہائیڈریٹس کے استعمال میں کمی لانی چاہئے۔

محققین کا کہنا تھا کہ پنیر کا استعمال دل کی صحت پر اچھے اثرات مرتب کرتا ہے جبکہ ترش پھل، اخروٹ، زیتون، مچھلی، سبزیاں اور دودھ وغیرہ بھی امراض قلب کے خطرات کو کم کرتا ہے۔

ان کا کہنا تھا کہ چاول، گندم اور آلو میں پائے جانے والے اضافی کاربوہائیڈریٹ دل کی بیماریوں کا باعث بن سکتا ہے۔

اس سے پہلے گزشتہ سال یہ خبر سامنے آئی تھی کہ آلوﺅں کا بہت زیادہ کھانا ذیابیطس کے مرض کا خطرہ بڑھاتا ہے۔

اوساکا سینٹر فار کینسر کارڈیووسکولر ڈیزیز پریوینٹیشن کی تحقیق میں بتایا گیا کہ ہفتے میں سات یا اس سے زائد مرتبہ آلوﺅں کو غذا میں استعمال کرنا ذیابیطس کا خطرہ 33 فیصد تک بڑھا دیتا ہے۔

یہاں تک کہ دو سے چار مرتبہ بھی ان کے استعمال سے یہ خطرہ سات فیصد تک بڑھ جاتا ہے۔

تحقیق کے مطابق آلو کے چپس یا فرنچ فرائز ہی ذیابیطس کا خطرہ بڑھانے میں سب سے آگے ہیں۔

SHARE

LEAVE A REPLY