پاناما لیکس کیس : سپریم کورٹ کا ایک رکنی کمیشن کے قیام کا فیصلہ

0
274

سپریم کورٹ آف پاکستان کے پانچ رکنی بینچ نے فیصلہ کیا کہ پاناما لیکس کی تحقیقات کے لیے ایک رکنی کمیشن قائم کیا جائے گا جو پاناما پیپرز میں سامنے آنے والے انکشافات کی تحقیقات کرے گا۔

پاناما گیٹ کمیشن کی سربراہی سپریم کورٹ کا جج کرے گا اور اسے سپریم کورٹ کے اختیار حاصل ہوں گے۔

ایک رکنی کمیشن کے قیام کا حتمی فیصلہ 7 نومبر کو سپریم کورٹ کی جانب سے ٹی اور آرز اور وزیر اعظم کے بچوں کے جوابات کا جائزہ لینے کے بعد کیا جائے گا۔

کیس کی سماعت 7 نومبر صبح ساڑھے 9 بجے تک کے لیے ملتوی کردی گئی۔

سپریم کورٹ کے پانچ رکنی بینچ نے پاناما لیکس کے معاملے پر وزیراعظم نواز شریف کے خلاف درخواستوں پر سماعت شروع کی تو وزیر اعظم کی جانب سے ان کے وکیل نے جواب داخل کرایا۔

پاکستان تحریک انصاف کے چیئرمین عمران خان، وائس چیئرمین شاہ محمود قریشی، امیر جماعت اسلامی سراج الحق، سربراہ عوامی مسلم لیگ شیخ رشید اور دیگر فریقین سماعت کے لیے عدالت عظمیٰ پہنچے۔

وزیر اعظم کا جواب سپریم کورٹ میں نواز شریف کے وکیل سلمان اسلم بٹ نے پڑھ کر سنایا۔

وزیر اعظم کی جانب سے داخل کرائے جانے والے جواب میں عدالت کو آگاہ کیا گیا کہ وہ بیرون ملک فلیٹس اور دیگر بتائی گئی جائیدادوں کے مالک نہیں ہیں۔

یہ بھی بتایا گیا کہ وزیر اعظم نواز شریف آف شور کمپنیوں کے مالک نہیں ہیں اور باقاعدگی سے ٹیکس قانون کے مطابق ادا کرتے ہیں۔

SHARE

LEAVE A REPLY