پاکستان پیپلز پارٹی کے چیئرمین بلاول بھٹو زرداری کا کہنا ہے کہ جمہوریت رہنی ہے تو اس کے لئے شیر کی قربانی لازمی ہے، نواز شریف نے پاناما بل پاس نہیں کیا تو سب کو لگ پتہ جائیگا کہ جمہوریت بہترین انتقام کیوں ہے، پاناما پیپرز پر اعتزاز احسن کا بل منظور کرنا ہوگا، یہ بل منظور نہیں ہوا تو کمیشن نہیں چل سکے گا اور اگر کمیشن نہیں چلا تو آپ کی حکومت بھی نہیں چل سکے گی۔

بلاول بھٹو زرداری نے ڈہرکی کے علاقے رہڑکی میں پاکستان پیپلز پارٹی کے جلسے سے خطاب کرتے ہوئے مزید کہا کہ چاچا عمران بہت ہوچکا، عوام نے بہت برداشت کرلیا، آپ میری زبان نہ کھلوائیں، اگر آپ مائنس ون کا مطالبہ کرینگے تو ہم بھی مائنس ون کا مطالبہ کریں گے، مائنس ون ہوا تو شیخ رشید آپ سے بہتر پارٹی سربراہ ہو گا، چاچا عمران ذرا لوگوں کو بتائیں کہ انکل پاشا نے آپ کی کتنی مدد کی تھی، ذرا لوگوں کو بتائیں استاد حمید گل اورآپ نے شہید بینظیر کے خلاف سازش کروائی۔

بلاول بھٹو زرداری کا کہنا ہے کہ ہماری جدو جہد اسلام کے امن کے پیغام کی ہے،ہماری جدوجہد دہشت گردی کو جڑ سےختم کرنےکی ہے، ہماری جدو جہد غریبوں، بے روزگاروں، عورتوں اور اقلیتوں کیلئے ہے ،میں یہاں آ پ کے ساتھ دیوالی منانا چاہتا تھا،میں یہاں آ پ کے ساتھ دیوالی منانا چاہتا تھا، دیوالی روشنی کی جیت،اندھیرے کی ہارہے،محبت کی جیت نفرت کی ہار ہے، دیوالی امن کی جیت جرم کی ہار ہے۔

انہوں نے کہا کہ میں مودی کو دکھانا اور بتانا چاہتا تھا کہ پاکستان میں مسلمان اورغیر مسلم ہم سب ایک ہیں،یہ ہم سب کا ملک ہے، ہم جناح کے پیرو کار ہیں، ہم پاکستان ہیں،ہم باب الاسلام کے رہنے والے ہیں، ہم لوگوں کو تقسیم نہیں کرتے،ہم امن چاہتےہیں، جمہوریت چاہتےہیں،ہم نسل، زبان اور جنس کی بنیاد پر تفریق نہیں کرتے، یہ ہے جناح کا پاکستان،بھٹو کا پاکستان ۔

بلاول بھٹو نے یہ بھی کہا کہ دہشت گرد ہمارے بچوں، بہنوں، ماؤں اور بہنوں کو مار رہے ہیں، حکومت کیا کر رہی ہے، صرف فوٹو سیشن، صرف مذمت، ایک بیان پھر خاموشی، چند دن کےبعد بھلا دیا جاتا ہے، نہ کوئی انویسٹی گیشن، نہ قوم کو پتہ چلتا ہے کہ اصل دہشت گرد کون تھے۔

انہوں نے یہ بھی کہا کہ دہشت گردوں کے سہولت کار اور فنانسر کون تھے، سب بھلا دیا جاتا ہے،دہشت گردی سے لڑنے کی اس حکومت میں نہ اہلیت ہے نہ نیت ہے، آپ نے خود کہا تھا کہ احتساب آپ سے شروع ہونا چاہیے، آپ کو تو سی پیک تحفے کے طورپر دیا گیا تھا،ملتان میں میٹرو بن رہی ہے مگر راجن پور میں ایک اسپتال تک نہیں، مجھ سے وعدہ کیا تھا لیکن آج تک آپ نے ایک ٹکا بھی تھر پر خرچ نہیں کیا، ایک علاقے کو ترقی دیں گے اور دوسرے پر کام نہیں کریں گے تو وفاق کمزور ہوگا،میں ملک کو بچانا چاہتاہوں۔

انہوں نے کہا کہ میں مودی کی سازش ناکام بنانا چاہتا ہوں، آپ کی وجہ سے پاکستان دنیا میں تنہا ہوتا جارہاہے، مودی سازش کررہا ہے لیکن حکومت اور وزیراعظم چپ ہیں،اقوام متحدہ کو بتائیں کہ پنجاب کے کھلے میدان میں دراندازی تو ہو ہی نہیں سکتی،میاں صاحب، مودی کی یاری میں ہمیں نہیں پتہ آپ کو کیا فائدہ ملا، آپ کے اس عمل کے بعد مودی جیسا شخص اسلامی ممالک میں جلسہ بھی کرتا ہے۔

بلاول بھٹو نے کہا کہ کشمیر پر پاکستانی مؤقف کو نقصان پہنچا، یہ سب صرف آپ کی وجہ سے ہورہا ہے،حیرت ہوتی ہے تین مرتبہ منتخب ہونے والے وزیراعظم کو تین سال میں ایک بھی وزیر خارجہ نہیں ملا،ملک قرضوں کے بوجھ تلے دبتا جارہاہے، مہنگائی آسمان سے باتیں کررہی ہے، دہشت گرد نام بدل کر حملے کررہے ہیں، فیڈریشن کو کمزور کیا جارہاہے۔

بلاول نے یہ بھی کہا کہ کسی مسئلے کا سیاس حل نکالنےکی فرصت نہیں، ہر ایک اپنی ضد پر اڑا ہوا ہے،ان کو صرف اور صرف اپنے اقتدار کا لالچ ہے،عوام تو ان کے ایجنڈے کا حصہ ہی نہیں

SHARE

LEAVE A REPLY