امریکا نے اپنی روایتی حلیف سعودی عرب کو اسلحے کی فراہمی روک دی ہے۔ اوباما انتظامیہ کے ایک اعلٰی اہلکار کے مطابق یمن میں سعودی عرب کی جانب سے عسکری مداخلت کی وجہ سے اسلحے کی ترسیل روکنے کا فیصلہ کیا گیا ہے۔

اس بیان کے مطابق اس دوران یمن میں بڑی تعداد میں عام شہری ہلاک ہو رہے ہیں۔ یمنی دارالحکومت صنعاء میں سعودی اتحاد کے ایک فضائی حملے میں ایک سو چالیس سے زائد افراد ہلاک ہوئے تھے۔ اکتوبر میں یہ بم باری جنازے کے ایک جلوس پر کی گئی تھی۔ سعودی عرب مارچ 2015ء سے یمنی تنازعے کا ایک فریق بنا ہوا ہے۔

SHARE

LEAVE A REPLY