کیا غضب کا اُسکا میرے ساتھ یارانہ رہا ۔صفدر ھمدانی

0
213

کیا غضب کا اُس کا میرے ساتھ یارانہ رہا
نامکمل لکھنے والے کا جوں افسانہ رہا

شک نہیں اسکی وفا پر شاید ہم کم ظرف ہیں
عمر بھر بھی ساتھ رہ کر وہ جو بیگانہ رہا

آئینے میں عکس کی ایسی ہوئی عادت مجھے
میں کسی کا ہو کے بھی اپنا ہی دیوانہ رہا

اس نے لا کے بیچ دریا کے مجھے تنہا کیا
مرتے دم تک پھر میں جیسے رند میخانہ رہا

شور ہے یوں تو مرے چاروں طرف صفدر مگر
میرے اندر اک عجب صورت کا ویرانہ رہا

SHARE

LEAVE A REPLY