عالمی چیمپئن اور ٹائٹل کے دفاع کی امید لیے انگلینڈ پہنچنے والے آسٹریلین ٹیم کی قسمت خراب چل رہی ہے۔ کینگرز کے دل کے ارمان بارش میں بہنے کا خدشہ ہے۔
ابتدائی دونوں میچز بارش کے سبب نامکمل کھیلنے والے اسٹیون اسمتھ الیون کے پاس صرف دو پوائنٹس ہیں، اسے پہلے مرحلے سے ہی ناک آئوٹ کا خطرہ ہے۔
اس صورتحال میں آسٹریلین صفوں میں کھلبلی مچی ہوئی ہے۔ آسٹریلیا کا رائونڈ میچ میں آخری مقابلہ روایتی حریف انگلینڈ سے ہفتے کو ہوگا۔
میزبان ٹیم زبردست فارم میں ہے اور دونوں میچز جیت کر سیمی فائنل میں جگہ بناچکی ہے۔
کوچ ڈیرن لی مین کے مطابق آسٹریلیا ٹیم میں جارحانہ انداز کے بیٹسمین کرس لن کو آل رائونڈر موئسز ہینرکس کی جگہ کھلانے پر غور کررہا ہے۔
انگلش پلیئرز آسٹریلیا کو ہراکر ٹورنامنٹ سے آئوٹ کرنےکیلئے پرعزم ہیں۔ تاہم آسٹریلیا کو ٹورنامنٹ میں چانس برقرار رکھنے کیلیے فتح لازمی درکار ہے۔
میچ کے بارے میں انگلینڈ کے وکٹ کیپر جوز بٹلر کہتے ہیں کہ آسٹریلیا کو باہر کرنا اچھا رہے گا البتہ ہم میچ سے متعلق زیادہ نہیں سوچ رہے ،ہمارا مقصد ہر میچ جیتنا اور ایونٹ میں ردھم برقرار رکھنا ہے ۔ اس بات سے فرق نہیں پڑتا کہ سامنے کون ہے۔ ہم ناقابل شکست رہتے ہوئے سیمی فائنل میں جانا چاہتے ہیں۔
ایجبسٹن گراؤنڈ ہمارے لئے اچھا ہے۔ انگلینڈ کی ٹیم غضب کی فارم میں ہے، دونوں میچ میں انگلینڈ کی ٹیم نے 300 سے زیادہ اسکور بنایا ہے۔ ہوم کنڈیشنز میں آسٹریلین بولرز کے لئے انگلینڈ بیٹسمینوں کو روکنا مشکل ثابت ہوسکتا ہے۔
بارش کے ہاتھوں ستائے ہوئے کینگرو کوچ ڈیرن لی مین بہت پریشان ہیں، ان کا کہنا ہے کہ موسم جب تک اجازت دے میچ جاری رکھا جانا چاہیے۔
منتظمین کو تماشائیوں کا مفاد بھی پیش نظر رکھنا چاہیے جو ٹکٹ لے کر میدان میں آتے ہیں اور مکمل میچ کی امید رکھتے ہیں، میرا خیال رہے کہ پلیئنگ کنڈیشنز میں اب کچھ تبدیلیوں کی ضرورت ہے۔ خاص طور پر انگلینڈ کے موسم برسات میں ۔
انہوں نے تجویز پیش کی کہ میچ کے دوران اگر ہلکی بوندا باندی ہورہی تو کھیل جاری رکھنا چاہیے ۔ ٹی ٹوئنٹی کرکٹ میں اکثر ایسا ہی ہوتا اور ہلکی بارش سے کھیل روکا نہیں جاتا تاہم ہمیں پلیئرز کی سلامتی کو ذہن میں رکھنا ضروری ہے

SHARE

LEAVE A REPLY