پاکستان عوامی تحریک کے سربراہ ڈاکٹر طاہر القادری نےکہاہےکہ سانحہ ماڈل ٹاؤن کےماسٹر مائنڈ کو چھوڑ دیا گیا، فیصلہ انصاف کے تقاضوں پر پورا نہیں اترتا،ہمیں اپنے مقتولوں کے خون کا قصاص چاہئے۔
عوامی تحریک کے کارکنوں سے ویڈیو لنک کے ذریعے خطاب کرتے ہوئے ڈاکٹر طاہر القادری نے کہا کہ انسداد دہشت گردی کی عدالت نے 138نامزد ملزمان میں سے 126 ملزمان کو طلب کیاہے جبکہ پس پردہ بیٹھ کر انسانیت کا قتل کرانے والے گروہ کو طلبی سے مستثنیٰ کردیا گیا ہے ۔ عوامی تحریک کے سربراہ کا کہنا تھاکہ رانا ثنا اللہ بیان حلفی دے چکے ہیں کہ انہیں وزیراعلیٰ پنجاب کا فون آیاتھا۔
طاہر القادری نے کہا ہےکہ سانحہ ماڈل ٹاؤن کے استغاثہ کا فیصلہ قانونی تقاضے پورے نہیں کرتا،اس کے باوجود عدالتی فیصلہ ہماری توقعات سے بڑھ کر آیا ہے،سانحے کے اصل ملزمان کو حکومت نے ویزے دے کر بیرون ملک بھجوا دیا ہے۔
ڈاکٹر طاہر القادری نے کہا کہ یہ عدل اور قصاص کی جنگ ہے،انصاف کے حصول کیلئے اخلاقی اور قانونی جنگ جاری رکھیں گے۔

SHARE

LEAVE A REPLY