پاکستان کے سابق جنرل راحیل شریف آئندہ ماہ میں دہشت گردی کے خلاف جنگ کیلئے سعودی عرب کی سربراہی میں قائم ہونے والے 39 اسلامی ممالک کی اتحادی فوج کے سربراہ کا عہدہ سنبھالیں گے، جسے ‘مسلم نیٹو’ کا نام دیا جارہا ہے۔

سابق جنرل کے قریبی ساتھی اور دفاعی تجزیہ نگار میجر جنرل (ر) اعجاز اعوان نے ڈان کو بتایا کہ مذکورہ معاملے پر سعودی عرب اور پاکستانی حکومت کے درمیان اتفاق رائے قائم ہوگیا ہے جس کے بعد حکومت نے جنرل (ر) راحیل شریف کو اتحاد میں شمولیت کیلئے ‘عدم اعتراض سرٹیفکیٹ’جاری کردیا ہے۔

ان کا کہنا تھا کہ سابق آرمی چیف مئی میں پہلے سے طے شدہ اتحادی ممالک کے وزراء دفاع کے اجلاس کے موقع پر حلف اٹھاسکتے ہیں، اس اجلاس میں فورسز کے ڈھانچے، اتحادی ممالک کے اہلکاروں کی تعداد اور دیگر امور کے حوالے سے اہم فیصلے متوقع ہیں۔

وزیر دفاع خواجہ آصف نے ایک نجی ٹی وی کو انٹرویو دیتے ہوئے کہا کہ سعودی عرب کو تحریری طور پر حکومتی رضامندی سے آگاہ کردیا گیا تھا۔

یہ منظوری ظاہری طور پر ریٹائرمنٹ کے حوالے سے موجود سرکاری قوانین یا قوائد و ضوابط میں ضروری ترمیم کے بعد دی گئی۔

خیال رہے کہ سابق آرمی چیف کے اسلامی ممالک کی اتحادی فورسز کی کمان سنبھالنے کے حوالے سے میڈیا میں آنے والی خبروں کے بعد اس معاملے کو رواں سال جنوری میں سینیٹ میں اٹھایا گیا تھا۔

اس موقع پر وزیر دفاع نے پارلیمنٹ کے ایوان بالا کو یقین دہانی کرائی تھی کہ ایسی کوئی درخواست موصول نہیں ہوئی ہے اور اس حوالے سے کوئی پیش رفت ہوئی تو ایوان کو آگاہ کیا جائے گا۔

وزیراعظم کے مشیر برائے خارجہ امور سرتاج عزیز نے کہا تھا کہ اگر ریٹائر جنرل راحیل شریف کی تقرری ہوئی تو وہ اس حوالے سے پالیسی بیان جاری کریں گے۔

SHARE

LEAVE A REPLY