جذام کے مریضوں کے لیے کام کرنےوالی ڈاکٹر روتھ فاؤ

0
303

ڈاکٹر روتھ فاؤ 1960ء میں پاکستان آئیں اور پھر جذام کے مریضوں کے لیے اپنی زندگی وقف کردی تھی۔وہ جذام کو مریضوں کو مفت سہولیات فراہم کرتی ہیں۔

سن 1996ء میں عالمی ادارہ صحت کی جانب سے پاکستان کو کوڑھ کے مرض پر قابو پالینے والے ممالک میں شامل کرلیا گیا اور پاکستان کو یہ اعزاز دلانے میں ڈاکٹروتھ فاؤ نے سب سے اہم کردار ادا کیا۔

سن 1998 میں انہیں اعزازی پاکستانی شہریت دی گئی جبکہ ہلال امتیاز، ستارہ قائد اعظم ، ہلال پاکستان اور لائیو اچیومنٹ ایوارڈ سے بھی نواز گیا۔

ڈاکٹرروتھ کیتھرینا مارتھا فاؤ ویسے تو جرمنی میں پیدا ہوئیں لیکن اپنی جوانی پاکستان کی خدمت میں وقف کردی، 60 کی دہائی میں پاکستان میں جزام کے ہزاروں مریض تھے، اس وقت سہولتیں اور علم کی کمی کی وجہ سے جزام یا کوڑھ کو لاعلاج اورمریض کو اچھوت سمجھا جاتا تھا۔

SHARE

LEAVE A REPLY