پاکستان میں شوگر کا مرض نزلہ زکام سےبھی زیادہ

0
63

ملک میں شوگر کا مرض نزلہ زکام سےبھی زیادہ پھیلنےلگا،ایک قومی سروے کے مطابق2016-17کےدوران ہرچوتھاپاکستانی اس خطرناک مرض کا شکار پایا گیا،خواتین کی تعداد مردوں سےبھی زیادہ اس مرض میں مبتلاپائی گئی ۔
پاکستان میں شوگرکامرض اس قدر تیزی سے پھیلنےلگاکہ محققین بھی ڈرکررہ گئے، 2016-17کے دوران کئےگئےسروےکےمطابق پاکستان کی کل آبادی کا 26 فیصد حصہ ذیابیطس کاشکارہے۔
طبی ماہرین وراثتی طور پر،آلودہ ماحول،ناقص خوراک اور وزرش نہ کرنےکی عادت کوجہاں اس کی وجہ قرار دے رہے ہیں،وہاں پیدائش کے وقت بچے کا وزن، ماں کی ناقص غذا،وقت پر کھانانہ کھانا، ڈبے کا دودھ، فکر معاش اور معاشرتی مسائل بھی شوگرکی وجوہات میں شامل ہیں۔
طبی ماہرین کہتےہیں کہ شوگرسےبچاؤاتنا مشکل بھی نہیں،زیادہ وزن والے افرادصرف 7 فیصد وزن کم کرلیں تو اگلے3 سال کےدوران 60 فیصد افرادشوگرسے بچ سکتے ہیں۔
ماہرین کا کہنا ہے کہ 20 فیصدافرادایسے ہیںجوشوگرکاشکار ہیں یا ہوسکتے ہیںمگرانہیں اس کا علم ہی نہیں،صاف ستھرےماحول،اچھی خوراک اور ورزش کی عادت سےشوگرپرقابو جاسکتا ہے۔

SHARE

LEAVE A REPLY