قطری مندوب کا غزہ کے دورے کے دوران اظہار خیال

0
64

فلسطین کے جنگ سے متاثرہ علاقے غزہ کی پٹی میں تعمیر نو کے لیے قائم کردہ قطری کمیٹی کے سربراہ اور قطری مندوب محمد العمادی نے کہا ہے کہ چارعرب ممالک سعودی عرب، بحرین، امارات اور مصر ہم پر دباؤ  ڈال رہیں کہ  ہم غزہ کے مظلوم اور محصور عوام کی مدد نہ کریں۔ ان کا کہنا ہے کہ اہالیان غزہ کی مدد کرنا ہماری انسانی ،اخلاقی اور دینی اور اخلاقی ذمہ داری ہے۔ ہم اس ذمہ داری سے کسی صورت میں سبکدوش نہیں ہوسکتے ہیں۔ غزہ کے عوام مظلوم ہیں اور ان کی مدد ہماری ذمہ داری ہے۔

محمد العمادی نے ان خیالات کا اظہار غزہ کی پٹی کےدورے کے دوران صحافیوں سے بات چیت میں کیا۔

ان کا کہنا تھا کہ قطر غزہ کے عوام  کی مدد جاری رکھی جائے گی۔ ہمارا مقصد غزہ کے عوام کو درپیش معاشی اور مالی بحران سے نکالنا ہے۔

العمادی کا کہنا تھا کہ ان کا غزہ کی پٹی کا دورہ اخلاقی ذمہ داریوں کا حصہ ہے۔ قطر کو غزہ کے عوام کی مشکلات کا اندازہ اور احساس ہے اور اس احساس کو سامنے رکھتے ہوئے اہالیان غزہ  کے صحت سمیت دیگر تمام مسائل کا حل نکالا جائے گا۔

ایک سوال کے جواب میں محمد العمادی کا کہنا تھا کہ غزہ کی صورت حال المناک ہے۔ غزہ میں شہریوں کی زندگیاں بچانے کے لیے علاقے کو ادویہ کی فراہمی جاری رکھی جائے گی۔

غزہ میں جاری صحت کے بحران پر بات کرتے ہوئے انہوں نے کہا کہ غزہ تباہی کے دھانے پر پہنچ چکا ہے۔ کہیں ایک بھی کوئی ایسا کوئی طبی ادارہ موجود نہیں جو غزہ کے مریضوں کے طبی مسائل کے حل میں ان کی مدد کرسکے۔

العمادی نے غزہ کی پٹی کی موجودہ بحرانی صورت حال کی تمام ذمہ داری صہیونی ریاست پرعاید کی اور کہا کہ اسرائیل کی طرف سے عاید کردہ نارروا پابندیوں کے باعث غزہ کے عوام کی مشکلات میں بے پناہ اضافہ ہوگیا ہے۔ انہوں نے اسرائیل کو مخاطب کرکے کہا کہ تم جیلر ہو اور ہم تمہاری جیلوں کو کھولنے کی صلاحیت رکھتے ہیں اور ان کی کلید ہمارے پاس ہے۔

ایک سوال کے جواب میں قطری مندوب کا کہناتھا کہ مصر کی جانب سے غزہ کی بین الاقوامی گذر گاہ رفح کی بندش باعث تشویش ہے اور اس رفح کی بندش کے نتیجے میں غزہ کے عوام کی مشکلات میں اضافہ ہورہا ہے۔

انہوں نے مزید کہا کہ فلسطینی وزیراعظم رامی الحمد اللہ نے قطر کی طرف سے ادویہ کی فراہمی کی تجویز قبول کی ہے اور وہ جلد ہی فلسطینی وزیر صحت جواد عواد کو دوحہ بھیجیں گے تاکہ غزہ کے عوام کو ادویہ کی سپلائی ممکن بنائی جاسکے۔

غزہ میں قطر کے پروجیکٹ

قطری مندوب محمد العمادی کا کہنا تھا کہ ان کا ملک غزہ کی پٹی میں جاری صحت کی صورت حال میں ہرممکن مدد دینے کو تیار ہے۔ غزہ میں صحت کی صورت حال بہتر ہوگی تو قطر بنیادی ڈھانچے اور دیگر مختلف منصوبوں پر کام شروع کرے گا۔

ان کاکہنا تھا کہ قطر کے تعاون سے تعمیر کی جانے والی شاہراہ الرشید[شاہرہ البحر]  کی تعمیر جاری رکھے ہوئے ہے اور اس سڑک کی تعمیر آخری مراحل میں ہے۔ اس کے بعد جلد ہ ی شاہراہ صلاح الدین کی توسیع کا کام بھی دو ماہ میں مکمل کرلیا جائے گا جب کہ دیگر پروجیکٹ پرکام جاری رکھا جائے گا۔

غزہ میں بجلی کا بحران اور اس کا حل

غزہ کی پٹی میں جاری بجلی کے بحران پر بات کرتے ہوئے انہوں نے کہا کہ غزہ میں بجلی کے بحران کا حل اسرائیل کے ہاتھ میں ہے۔ اگر اسرائیل ہمارے لیے اس کا قفل کھول دے تو تمام مسائل اور بحران با آسانی حل ہوسکتے ہیں۔

ایک سوال کے جواب میں انہوں نے کہا کہ قطر نے شاہراہ صلاح الدین کا بنیادی ڈھانچہ تیار کرلیا ہے۔ اگر مشرق وسطیٰ کے لیے چار ملکی گروپ اگر شاہراہ صلاح الدین کے اطراف میں گیس پائپ لاین بچھانے میں کامیاب ہوتا ہے تو قطر اس سڑک کے کنارے متعدد مقامات پر پاور پلانٹ لگائے گا۔

المعادی نے کہا کہ اسرائیل کے ماحولیاتی اقدامات نا مناسب ہیں اور یہ صہیونی کالونیوں کی طرف سے منظوری کے محتاج ہیں۔

مرکز اطلاعات فلسطین

SHARE

LEAVE A REPLY