اگر میں امریکن ہوتی تو ڈونالڈ ٹرمپ کو ووٹ دیتی ۔۔۔۔از؛ ڈاکٹر نگہت نسیم

0
518

سال 2016 کے امریکی صدارتی انتخابات کی مہم ختم ہو چکی ہے۔ لیکن، مہم کےختم ہوتے ہوتے بھی ری پبلیکن پارٹی کے ڈونالڈ ٹرمپ اور ڈیموکریٹک پارٹی کی ہیلری کلنٹن، منگل کے انتخابی معرکے سے قبل، بڑی بڑی ریلیوں کی قیادت کی۔ ٹرمپ منہ پھٹ اور جائیداد کے نامور کاروباری شخص ہیں جو پہلی بار کسی منتخب عہدے کے لیے میدان میں اترے ہیں۔ وہ سابق وزیر خارجہ کلنٹن کو سخت مقابلہ دینے کے لیے اب بھی پانچ ریاستوں کا دورہ کر رہے ہیں۔ سیاسی جائزوں سے پتا چلتا ہے کہ امکان یہی ہے کہ ہیلری ملک کی پہلی خاتون صدر بن سکتی ہیں۔

اگر میں امریکن ہوتی تو ڈونالڈ ٹرمپ کو ووٹ دیتی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ کیونکہ اس نے بڑی سچائی سے امریکیوں کی دل کی آواز سنی ہے کہ وہ دہشت گردی کی پرائی جنگیں لڑتے لڑتے تھک چکے ہیں ۔۔۔ ہر وہ مسلمان جو ایکٹوسٹ یعنی شدت پسند یعنی دہشت گرد ہے وہ امریکہ کی سرزمین پر نامنظور ہے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ مجھے یقین ہے کہ اس کی نفرت میں سچائی ہے اور وہ سامنے سے وار کرے گا ۔۔۔۔ہیلری کلنٹن اندرون خانے پاکستان کی سب سے زیادہ مخالف اور مسلمانوں کو نیست و نابود کرنے میں سب سے آگے اور مشاق کھلاڑی ہے ۔۔ڈیموکریٹک پارٹی کے ہر رکن نے اپنے دشمنوں کو میٹھی چھری بن کر لہولہان کیا ہے ۔۔۔۔

یقین کیجئے میں نے اپنی بات کی ہے کہ مجھے اپنے دشمن بہت اچھے لگتے ہیں لیکن دشمن بھی وہ جو ڈنکے کی چوٹ پر دشمنی کرے ۔۔ امریکہ کسی کا بھی دوست نہیں حتی کہ اسرائیل کا بھی نہیں ۔۔ مطلب پرست وہیں گر جائے گا جہاں مطلوب مل جائے ۔۔ سو دونوں دشمنوں میں ٹرمپ از بیٹر دشمن ۔

یہ بات سب کے پیش نظر رہے عام امریکی شہری بذات خود کسی دین مذہب رنگ نسل کا دشمن نہیں ہے ۔ یہ سب سیاسی اور حکومتی اداروں کی چال بازیاں ہیں ۔۔ بلکل ایسے ہی جیسے انڈیا اور پاکستان کے سربراہ اور حکومتی سطح پر عام لوگوں کے درمیان نفرتیں پھیلانے کا کوئی موقع ہاتھ سے نہیں جانے دیتے اور کچھ نا کچھ ایجاد کرتے رہتے ہیں۔

سب جانتے ہیں اور برملا کہہ رہے ہیں کہ ٹرمپ کو جان بوجھ کر ہیلری کے مقابلے میں اتارا گیا ہے تاکہ ہیلری کی کامیابی کو یقینی بنایا جا سکے ۔ کیونکہ ہیلری ہی وہ واحد امیداوار ہے جو سابقہ حکومتوں کے بقیہ ایجنڈے کوپایا تکمیل تک پہنچا سکتی ہے ۔ جیسا کہ اوباما کو اپنے دور حکومت میں ہر فیصلے میں ہیلری کی معاونت رہی اور ہیلری لاکھوں معصوم انسانوں کو موت کے گھاٹ اتارنے میں اس کی مددگار رہی ۔ اسی طرح اب وہ ہیلری کے کندھوں پر ہاتھ رکھے پوری انتخابی مہم چلاتے رہے ہیں کیونکہ ابھی لاکھوں معصوم انسان اور رہ گئے ہیں جنہیں ٹھکانے لگانا ہے۔ پس اس سے ثابت ہوا کہ ہیلری اوباما دونوں ایک ہی ہیں ۔۔۔۔ایسے میں ٹرمپ ہم سب کا بہترین دشمن ہوگا ۔۔۔ اس لیئے اس سے لڑائی میں آسانی ہو گی ۔۔ اس سے یہ بھی ثابت ہوتا ہے کہ ہیلری اور ٹرمپ ایک ہی سکے کے دو رخ ہیں ۔ بس ایک ہیڈ یعنی ہیلری ہے اور ایک تیل یعنی ٹرمپ ہے ۔

میں سوچ رہی ہوں کہ لوگ حقیقت اب بھی نہیں جان پائے ہیں کہ ہمارا اصل دشمن ہے کون ؟

مسلمان وہ بد نصیب ہے جس سے سب سے زیادہ نفرت سعودی عرب اور ایران کے مسلم حکمران کرتے ہیں ۔۔۔ پر ہم اپنے دشمنوں کو پہچانتے کہاں ہیں ۔۔ پہچان بھی لیں تو مانتے نہیں ہیں ۔ کیا یہ پرکھ کافی نہیں کہ نواسہ رسول صلی اللی علیہ والہ وسلم ۔ جنت کے سردار مولا حسین علیہ السلام کو شہید کرنے والے نا امریکی عیسائی تھے نا اسرائیلی یہودی نا بھارتی ہندو ۔۔۔ وہ سارے کے سارے مسلمان تھے ۔۔ حافظ قرآن تھے ۔۔ میرا خیال ہے کہ ہمیں اب تک سمجھ لینا چاہیئے تھا کہ ہمارا دشمن کون ہے ۔۔؟

چلیئے چھوڑیئے کسی نے کہاں ماننا ہے ۔۔ سب کے ساتھ مل کر ہر دین مذہب مسلک کو اپنا دشمن سمجھتے ہیں ۔۔ اور بات کرتے ہیں آج ہونے والے امریکی انتخابات کی ۔۔ جہاں دنیا کے امن و جنگ کا فیصلہ ” امریکی عوام ” اور دھاندلی کرنے والے ” خواص ” کے ہاتھ ہے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

SHARE

LEAVE A REPLY