برسبین ٹیسٹ میں آسٹریلیا نے دلچسپ مقابلے کے بعد پاکستان کو 39رنز سے شکست دے کر سیریز میں ایک۔ صفر کی برتری حاصل کرلی۔ اسد شفیق کو شاندار بیٹنگ پر مین آف دی میچ قرار دیا گیا۔

آسٹریلیانے پاکستان کو جیت کیلئے 490رنز کا مشکل ترین ہدف دیا جس کے تعاقب میں پاکستان نے 450رنز بنائے، جو برسبین میں کسی بھی ٹیم کا چوتھی اننگز میں سب سے بڑا اسکور ہے، اس سے قبل انگلینڈ نے 2006-07میں 370رنز بنائے تھے۔

وولن گابا، برسبین میں کھیلے گئے ٹیسٹ کے پانچویں اور آخری روز پاکستان نے 382رنز آٹھ کھلاڑی آؤٹ پر نامکمل اننگز کا آغاز کیا،اسد شفیق 100 اور یاسر شاہ نے 4رنز سے اننگز کو آگے بڑھایا، دونوں بیٹسمینوں نے محتاط انداز میں بیٹنگ کرتے ہوئے آسٹریلوی بولرز کا جم کا مقابلہ کیا، اسد شفیق کے سامنے کینگروز بالکل بے بس نظر آئے۔نو ویں وکٹ کی شراکت میں اسد شفیق اور یاسر شاہ نے 71رنز بنائے۔

ایک موقع پر ایسا لگ رہا تھا کہ پاکستان یہ ٹیسٹ بآسانی جیت جائے گا لیکن مچل اسٹارک نے اسد شفیق کو آؤٹ کرکے امیدوں پر پانی پھیردیا،اسد شفیق نے اپنے کیریئر کی بہترین اننگز کھیلی ، وہ 137رنز بنا کر آؤٹ ہوئے ،چھٹی پوزیشن پرشفیق احمد کی مجموعی طور پر یہ 9ویں سنچری ہے، جو ایک ریکارڈ ہے ، اس سے قبل گیری سوبرز نے اس پوزیشن پر 8سنچریاں اسکور کی تھیں۔

یاسر شاہ33رنز بناکر رن آؤٹ ہوئے، یوں پاکستان کی پوری ٹیم 450رنز بناکر آؤٹ ہوگئی۔ یہ پاکستان کسی بھی ٹیسٹ کی دو اننگز کے درمیان رنز کا سب سے زیادہ فرق (308) ہے، اس سے قبل پاکستان کا دوسری اننگز کا فرق277رنز تھا ، جب اس نے آسٹریلیا کے خلاف راولپنڈی ٹیسٹ کی پہلی اننگز میں 260اور دوسری اننگز میں 537رنز بنائے تھے۔

دوسری اننگز میں پاکستان کے دیگر بیٹسمینوں میں اظہر علی 71، یونس خان 65، محمد عامر48اور وہاب ریاض 30رنز کے ساتھ نمایاں رہے۔

آسٹریلیا کی طرف سے اسٹارک نے4کھلاڑیوں کو پویلین کی راہ دکھائی جبکہ براڈ نے 3اور لایون نے 2 وکٹیں حاصل کیں ۔

آخری اسکور یہ رہا۔ آسٹریلیا429اور 202رنز5 کھلاڑی آؤٹ پر اننگز ڈکلیئر۔ پاکستان 142اور450رنز ۔

تین ٹیسٹ میچز پر مشتمل سیریز کا دوسرامیچ 26دسمبر سے ملبورن میں کھیلا جائے گا

SHARE

LEAVE A REPLY