فیصل آباد، بلاول بھٹو نے کہا 4مطالبات ماننےتک تحریک جاری رہےگی

0
490

مطالبات کی منظوری کیلئے چیئرمین پیپلز پارٹی بلاول بھٹو زرداری کی قیادت میں لاہور سے فیصل آباد تک احتجاجی ریلی نکالی گئی۔ اس موقع پر بلاول بھٹو کا کہنا تھا 2017ءمیں ہی شریفوں سے نجات حاصل کر لیں گے۔ پنجاب حکومت نے صوبے کا بیڑہ غرق کر دیا ہے۔ سگیاں پل یر استقبالیہ کیمپ سے خطاب کرتے بلاول بھٹو زرداری نے کہا 2018ءنہیں بلکہ قوم کو اسی سال شریفوں سے چھٹکا را دلائیں گے۔ پیپلز پارٹی اپنے چار مطالبات پر قائم ہے اور انہیں پورے کرائے گی۔ عوام کو کرپٹ نظام کے خلاف گھروں سے باہر نکلنا ہوگا۔

بلاول کا کہنا تھا جو کالعدم تنظیموں کے ساتھ بیٹھتے ہیں ان سے چھٹکا را حاصل کرنا ہے۔ یہ کھاتے ظالموں کے ساتھ اور بات مظلوموں کی کرتے ہیں۔ انہوں نے کہا کہ پیپلزپارٹی نے ملک و قوم کے لیے قربانیاں دی ہیں۔ پاکستان پیپلزپارٹی عوام کی جماعت ہے۔ میں اپنے والدہ کے مشن کو جاری رکھوں گا۔ انہوں نے کہا 2018ءنہیں بلکہ قوم کو اسی سال نواز شریف اور شہباز شریف سے چھٹکارا حاصل کرنا ہے ۔حکومت کے خلاف تیر کمان سے نکل چکا ہے اور اب بہت جلد عوام کو نواز شریف اور شہباز شریف سے چھٹکارے کی خبر بھی ملے گی ۔بلاول بھٹو نے کہا کہ ہم اس کرپٹ نظام کے خلاف ہیں، جبکہ موجودہ کرپٹ سسٹم سے چھٹکارے کے لئے عوام کو گھروں سے باہر نکلنا ہوگا۔ قبل ازیں پیپلز پارٹی کی ریلی بلاول ہاﺅس لاہور سے روانہ ہوئی ۔ بلاول ہاﺅس آنے والے کارکن ڈھول کی تھاپ پر بھنگڑے ڈالتے ہوئے قیادت کے حق میں نعرے لگاتے رہے ۔

اس موقع پر پیپلز پارٹی کے خصوصی گیت بھی چلائے جاتے رہے ۔ بلاول بھٹو کی قیاد ت میں ریلی کامختلف مقامات پر پرجوش استقبال کیا گیا اور اس موقع پر کارکن ان کی گاڑی پر پھولوں کی پتیاں نچھاور کرتے رہے ۔بلاول بھٹو سگیاں کے قریب اچانک اپنی گاڑی کا سن روف کھول کر باہر نکل آئے اور کارکنوں کے نعروں کا ہاتھ ہلا کر جواب دیتے رہے ۔ پیپلز پارٹی کے مرکزی رہنما قمر زمان کائرہ ، ندیم افضل چن ، نیئر بخاری ، مصطفی کھوکھر سمیت دیگر بھی ریلی کے ہمراہ روانہ ہوئے ۔ پیپلز پارٹی کی ریلی کی حفاظت کے لئے پولیس کی طرف سے سکیورٹی کے انتہائی سخت انتظامات کئے گئے ۔ پولیس حکام کے مطابق پیپلز پارٹی کی ریلی کی حفاظت کے لئے تین ہزار اہلکار تعینات کئے گئے تھے۔ بلاول بھٹو زرداری نے کہا کہ شریفوں نے پاکستان اور عوام کو یرغمال بنا رکھا ہے‘ تخت لاہور کا خاتمہ بہت ضروری ہے۔ شریفوں سے حساب لینا ہو گا۔

اس موقع پر انہوں نے ”جاگ میرا پنجاب جاگ تیرے دامن پر لگ گیا شریفوں کا داغ“ نعرہ بھی لگایا۔ چیئرمین پیپلزپارٹی بلاول بھٹو زرداری شیخوپورہ پہنچے تو کارکنوں نے ان کا بھرپور استقبال کیا۔ کارکنوں نے ان پر پھولوں کی پتیاں نچھاور کیں۔ جیالوں نے کبوتر فضا میں چھوڑے۔ بتی چوک شیخوپورہ پر خواتین کارکنوں کی بڑی تعداد موجود تھی۔ بلاول نے شیخوپورہ میں ریلی سے خطاب کرتے ہوئے کہا انڈسٹریاں بند ہو رہی ہیں، بیروزگاری بڑھ رہی ہے، تخت جاتی امراءکے اقتدار کا خاتمہ کرنا ہو گا۔ ن لیگ کی کسان دشمن پالیسیوں سے کسان رُل گئے۔ حکمران صرف اپنے مفادات کو تحفظ دے رہے ہیں، گیس ہے نہ بجلی، شریفوں کی حکومت میں برآمدات میں کمی ہوئی۔ مسلم لیگ ن کی حکومت مہنگائی کو فروغ دیتی ہے۔ شیخوپورہ کے لوگ ساتھ دیں تو ان شریفوں کو بھگا دیں گے۔ نواز شریف کہتے ہیں ملک ترقی کر رہا ہے، ملک کی ترقی ٹی وی سکرین پر اشتہارات میں نظر آتی ہے، یہ کسان دشمن، مزدور دشمن، غریب مٹاؤ حکومت ہے، ترقی تب ہوتی ہے جب ملک کی برآمدات بڑھتی ہیں۔ بلاول نے شاہ کوٹ میں اپنا مختصر خطاب کرتے ہوئے کہا اگر ن لیگ کو بھگانا ہے تو آپ کو پاکستان پیپلزپارٹی کا ساتھ دینا ہو گا۔ میں عہد کرتا ہوں کہ آپ کا ساتھ نہیں چھوڑوں گا لیکن اگر آپ میرا ساتھ دیں گے تو ہم ن لیگ کو صوبے سے نکالنے میں کامیاب ہو جائیں گے۔ سابق صدر آصف علی زرداری نے ریلی سے قبل پیپلزپارٹی کے چیئرمین بلاول زرداری سے ٹیلیفونک رابطہ کیا۔ دونوں رہنماؤں نے قومی مفاد کے 4 مطالبات پر حکومت کو ٹف ٹائم دینے پر اتفاق کیا۔ ذرائع کے مطابق زرداری کا کہنا تھا کہ حکومت ملکی مفادات سے کھیل رہی ہے۔ قوم کے مطالبات سے اب پیچھے نہیں ہٹا جائیگا۔ بلاول بھٹو زرداری نے اس موقع پر کہا کہ ان کی تحریک اب آگے ہی آگے بڑھے گی۔

فیصل آباد میں خطا ب کرتے ہو ئے بلاول بھٹو نے کہا 4مطالبات ماننےتک تحریک جاری رہےگی۔ متعدد بارکہاسی پیک منصوبےکومتنازعہ نہ بنایاجائے- ذاتی تعلقات کی وجہ سےخارجہ پالیسی نہیں چل سکتی،بپاکستان کوعالمی سطح پر بڑے چیلنجز کاسامناہے-ہمارامطالبہ تھاواضح خارجہ پالیسی بنائی جائےاوروزیرخارجہ لگایاجائے-آپ ہمیں جیلوں میں قیداورسرمایہ بیرون ملک بھیجتےرہے ہیں-میاں صاحب!آپ مال بچانےکےلیےاپنےبچوں کوآگےکررہےہیں-شہبازشریف اب وزیراعظم بننےکےخواب دیکھتےہیں-فیصل آبادملک کاانڈسٹریل حب کہلاتاتھا،آج صنعتیں بندپڑی ہیں- کسان خودکشیاں کرنے پرمجبورہیں-

SHARE

LEAVE A REPLY