بھارت نے مقبوضہ کشمیرمیں کشمیری طالبات کے آزادی کے حق میں اور بھارت مخالف مظاہروں سے نمٹنے کیلیے ایک ہزارخواتین پولیس اہلکاروں پر مشتمل پولیس بٹالین قائم کرنے کا اعلان کیا ہے۔

کشمیرمیڈیا سروس کے مطابق بھارتی وزیر داخلہ راج ناتھ سنگھ کی سربراہی میں نئی دہلی میں مقبوضہ کشمیر کی صورتحال کے بارے میں ایک اعلیٰ سطح کے اجلاس میں کشمیری طالبات سے نمٹنے کیلیے لیڈی بٹالین فورس بنانے کا فیصلہ کیا گیا۔

اجلاس میں کٹھ پتلی انتظامیہ اوربھارتی پولیس کے اعلیٰ عہدے دار بھی موجود تھے، اجلاس میں کہا گیا کہ حالیہ دنوں میں کشمیری طلبہ اور طالبات کی طرف سے وادی کشمیر میں بڑے پیمانے پر بھارت مخالف احتجاجی مظاہروں اور بھارتی فورسز پر پتھراؤ کا سلسلہ جاری ہے، مظاہروں سے نمٹنے کیلیے مقبوضہ علاقے میں بھارتی فوجیوں اور پولیس اہلکاروں کی بڑی تعداد تعینات ہے تاہم کشمیری طالبات کے مظاہروں اور پتھراؤ سے نمٹنا ایک چیلنج بن گیا ہے جبکہ اس سلسلے میں ایک حکمت عملی پر غور و خوص کیاگیا اور فیصلہ کیاگیا کہ وادی کشمیرمیں خواتین خاص طورپر طالبات کے مظاہروں اور پتھراؤ سے نمٹنے کیلیے ایک ہزارخواتین پولیس اہلکاروں پر مشتمل پولیس بٹالین قائم کی جائے گی۔

SHARE

LEAVE A REPLY