افغانستان: نیٹو قافلے پر خود کش حملہ، متعدد ہلاکتوں کا خدشہ

0
153

افغانستان کے جنوبی صوبے قندہار میں غیر ملکی فوجی قافلے پر کار خود کش دھماکے کے نتیجے میں متعدد افراد کے ہلاک ہونے کی اطلاعات ہیں۔

فرانسیسی خبر رساں ادارے اے ایف پی کی رپورٹ کے مطابق صوبائی پولیس ترجمان ضیاء درانی کا کہنا تھا کہ ’قندہار کے علاقے دامن سے گزرنے والے نیٹو کے فوجی قافلے کو سہ پہر میں کار بم کے ذریعے نشانہ بنایا گیا‘۔

نیٹو حکام نے جاری بیان میں دھماکے کی تصدیق کرتے ہوئے بتایا کہ قافلے پر حملہ ہوا اور اس میں ہلاکتیں بھی ہوئیں لیکن فوری طور پر واقعے کی مزید تفصیلات نہیں بتائی گئیں۔

ایک عینی شاہد کے مطابق جائے حادثہ پر 3 لاشیں دیکھی گئیں۔

ایک دکان دار محمد عظیم نے بتایا کہ ’میں نے حملے کے بعد غیر ملکی فوجی گاڑی میں آگ لگ گئی، جس کے بعد ایک ہیلی کاپٹر موقع پر پہنچا اور گاڑی سے 3 لاشوں کو نکالا اور روانہ ہوگیا، قافلے میں 3 بکتر بند گاڑیاں شامل تھیں‘۔

افغانستان میں غیر ملکی اور مقامی فورسز کو نشانہ بنانے والے افغان طالبان نے خود کش دھماکے کے فوری بعد ایک پیغام میں اس کی ذمہ داری قبول کی۔

ادھر پاکستان کے دفتر خارجہ نے افغانستان کے صوبے قندہار میں ہونے والے خود کش بم دھماکے کی مزمت کرتے ہوئے اسے افسوس ناک قرار دیا۔

ترجمان دفتر خارجہ کا کہنا تھا کہ خودکش حملے میں کئی قیمتی جانوں کے ضیاع اور کئی افراد کے زخمی ہونے کی مذمت کرتے ہیں۔

گذشتہ روز افغانستان کے شہر ہرات میں ایک مسجد میں بم دھماکے سے 20 افراد ہلاک اور متعدد زخمی ہوئے تھے۔

خیال رہے کہ 3 روز قبل کابل میں عراقی سفارت خانے کے باہر دھماکا ہوا تھا اور مسلح دہشت گردوں نے حملہ کیا تھا تاہم حکام کے مطابق چار حملہ آوروں کو ہلاک کیا گیا جبکہ ایک پولیس اہلکار معمولی زخمی ہوا۔

اس سے قبل رواں سال جون میں کابل کی ایک مسجد میں خودکش دھماکے کے نتیجے میں 4 افراد ہلاک اور 8 زخمی ہوگئے تھے۔

اسی طرح جون کے آغاز میں کابل میں ہونے والے ٹرک بم دھماکے میں 150 سے زائد افراد ہلاک ہوگئے تھے۔

SHARE

LEAVE A REPLY