پاکستانی کوچز اور کرکٹرز کے میڈیا میں مسلسل متنازع بیانات کے بعد پاکستان کرکٹ بورڈ نے اپنی میڈیا پالیسی سخت کرنے کا فیصلہ کیا ہے۔ مستقبل میں ڈسپلن کی خلاف ورزی کرنے والے پاکستان ٹیم کےآفیشلز اور کھلاڑیوں کے خلاف سخت انضباطی کارروائی کا عندیہ دیا ہے۔ پاکستان کرکٹ ٹیم پیر کو آئر لینڈ اور انگلینڈ کے دورے پر جارہی ہے۔ دورے میں انگلش میڈیا کا سامنا پاکستانی ٹیم انتظامیہ اور کھلاڑیوں کے لئے یقینی طور پر امتحان ہوگا۔ پی سی بی ترجمان امجد حسین کا کہنا ہے کہ پاکستانی ٹیم انتظامیہ اور کھلاڑیوں پر واضح کردیا گیا ہے کہ بورڈ سے پیشگی اجازت کے بغیر کوئی کھلاڑی یا آفیشل انٹر ویو یا بیان نہیں دے سکے گا۔ اگر کسی نے انتظایہ کی ہدایت کو نظر انداز کیا تو اس کے خلاف سخت ڈسپلنری ایکشن لیا جائے گا۔ سب سے واضح کردیا گیا ہے کہ خلاف ورزی برداشت نہیں کی جائے گی۔ دورے کے لئے پاکستانی ٹیسٹ ٹیم کے تربیتی کیمپ کا دوسرا مرحلہ جمعرات سے لاہور میں مکی آرتھر کی نگرانی میں شروع ہورہا ہے۔ جو

کھلاڑی پاکستان کرکٹ بورڈ سے سینٹرل کنٹریکٹ میں شامل نہیں ہیں انہیں ٹور کنٹریکٹ دیا جائے گا۔ ذرائع کے مطابق حال ہی میں کچھ ٹیم آفیشلز کی جانب سے متنازع انٹرویوز کے بعد بورڈ کی پالیسی سخت کردی ہے۔ اس سلسلے میں ٹیم انتظامیہ کو بھی سخت ہدایات دی جارہی ہیں۔ پاکستان کرکٹ ٹیم کے ساتھ منسلک غیر ملکی کوچز پر بھی ان ہدایات کا اطلاق ہوگا

SHARE

LEAVE A REPLY