تحریک انصاف کی جانب سے پنجاب کے نام زد گورنرچوہدری محمد سرور نے کہا ہے کہ نہ تنخواہ لوں گا نہ پروٹوکول ، سارے نجی اخراجات خود برداشت کروں گا۔

لاہورسے جاری بیان میں چوہدری سرورکا کہنا تھا کہ قوم کے ٹیکس کے پیسے کی حفاظت کریں گے اوربطورگورنرعوامی فلاح کے لیے دن رات کوشاں رہیں گے۔

چوہدری سرور پہلے سے یہ بات واضح الفاظ میں بتا چکے ہیں کہ وہ گورنر ہاؤس میں نہیں رہیں گے تاہم اب انہوں نے اس عزم کا اظہار بھی کیا ہے کہ وہ بطور گورنر کسی بھی قسم کا پروٹوکول نہیں لیں گے اور جتنی دیر تک گورنر کے عہدے پر رہیں گے اپنے تمام نجی اخراجات اپنی جیب سے ادا کریں گے۔

عام انتخابات 2018ء میں کامیابی ، خیبرپختونخواہ، مرکز اور پنجاب میں بھی حکومت سازی کے بعد وزیراعظم عمران خان نے چودھری سرور کو گورنر پنجاب کے عہدے کے لیے نامزد کیا تھا۔

چودھری سرور مارچ 2018ء میں سینیٹر منتخب ہوئے تاہم اب انہیں گورنر پنجاب کا عہدہ سنبھالنے کے لیے سینیٹ کی نشست سے مستعفی ہونا پڑے گا۔

نامزد گورنر پنجاب 27 اگست کو سینیٹ سے استعفیٰ دیں گے جس کے بعد 28 اگست کو گورنر پنجاب کے عہدے کا حلف اُٹھائیں گے۔

SHARE

LEAVE A REPLY