کشمیر کے صدر مسعود خان نے آسٹریلوی پارلیمنٹ، حکومت اور سماجی حقوق کے اداروں سے مطالبہ کیا ہے کہ وہ مقبوضہ کشمیر میں انسانی حقوق کے خلاف بھارتی مظالم روکنے کے لیے اپنا کردار ادا کرے۔

ڈان اخبار میں شائع رپورٹ کے مطابق مسعود خان نے سابق آسٹریلوی سینیٹر اور سماجی رکن لی رویانون سے بات چیت کرتے ہوئے واضح کیا کہ جولائی 2016 میں بھارت فوجیوں کے ہاتھوں نوجوان کمانڈر برہان مظفر وانی کی شہادت کے بعد بھارتی فوجیوں اور پولیس کی مظالم میں شدت آگئی ہے۔

واضح رہے کہ آزاد کشمیر کے صدر مسعود خان کی دعوت پر آنے والی سابق آسٹریلوی سینیٹر کو بھارتی میڈیا, کشمیریوں کے حقوق کے تحفظ کے حق میں آواز اٹھانے پر متعدد مرتبہ شدید تنقید کا نشانہ بنا چکا ہے۔

صدر مسعود خان نے کشمیر میں انسانی حقوق سے متعلق حالیہ رپورٹ کے بارے میں بتایا کہ اقوام متحدہ کے ہائی کمشنر برائے انسانی حقوق (او ایچ سی ایچ آر) نے بھارت سے مطالبہ کیا ہے کہ وہ عالمی قوانین کا تحفظ اور کشمیر میں انسانی حقوق کی عزت کرے۔

کشمیر کے صدر نے سابق سینیٹر سے او ایچ سی ایچ آر کی رپورٹ کے تناظر میں 2 سفارشات پر مدد طلب کی جس میں مقبوضہ کشمیر میں انسانی حقوق کی خلاف ورزی پر اقوام متحدہ کے انسانی حقوق کونسل سے کمیشن آف انکوائری (سی او آئی) تشکیل دینا اور خطے میں کالے قانون کا خاتمہ ہے۔

SHARE

LEAVE A REPLY