سر کے بل آنے لگے دربار میں اہل قلم۔ صفدر ھمدانی

0
592

اپنی ہی خواہش سے ہیں منجدھار میں اہل قلم
صاحبو خوش حلقہء سرکار میں اہل قلم

شاعروں نے اس قلم سے امتیں بیدار کیں
سو چکے اب مجمعء بیدار میں اہل قلم

گفتگو سن کر قلم شرمائے جنکی باخدا
ہم نے ایسے دیکھے ہیں گفتار میں اہل قلم

ظلم پہ تُف کے لیئے لکھتے نہیں ہیں ایک لفظ
ظالموں کے ڈھل چکے کردار میں اہل قلم

دوستی کا فخر تھے اور دوستوں کا مان بھی
اب تو خود شامل ہوئے اغیار میں اہل قلم

جو قلم کی عزت و ناموس کو بیچا کریں
ایسے چنوا دے کوئی دیوار میں اہل قلم

اک اشارہ ہی بہت کافی تھا دعوت کے لیئے
سر کے بل آنے لگے دربار میں اہل قلم
کیا کریں گے رہنمائی قوم کی بتلایئے
خود گرفتار بلا منجدھار میں اہل قلم

یہ فقط اس عہد کا ہی مرثیہ صفدر نہیں
بکتے ہیں ہر دور میں بازار میں اہل قلم

صفدر ھمٰدانی

SHARE

LEAVE A REPLY