سات ماہ کے وقفے کے بعد خصوصی عدالت سابق صدر جنرل (ر) پرویز مشرف کے خلاف غداری کیس کی دوبارہ سماعت کا آغاز کرے گی، جس میں سابق خاتونِ اول صہبا مشرف کی اپنی جائیدادوں کے ضبطگی کے خلاف دائر درخواست کو بھی سنا جائے گا۔

ڈان اخبار کی ایک رپورٹ کے مطابق خصوصی عدالت نے گذشتہ سال جولائی میں پرویز مشرف کو مفرور قرار دیتے ہوئے ان کی قابلِ منتقل اور ناقابلِ منتقل جائیداد کو ضبط کرنے کے احکامات جاری کیے تھے۔

وزارت داخلہ کی جانب سے خصوصی عدالت کو جمع کرائی گئی جائیداد کی تفصیلات کے مطابق سابق ملٹری ڈکٹیٹر 7 ناقابل منتقل جائیدادوں اور 9 بینک اکاؤنٹس کے مالک ہیں۔

ان کی ناقابل منتقل جائیدادوں میں آرمی ہاؤسنگ اسکیم کراچی، خیابانِ فیصل ڈی ایچ اے کراچی، بیچ اسٹریٹ ڈی ایچ اے کراچی، ڈی ایچ اے اسلام آباد اور ڈی ایچ اے لاہور میں موجود پلاٹس شامل ہیں۔

علاوہ ازیں وہ چک شہزاد کے ایک فارم ہاؤس اور بہاولپور میں زرعی اراضی کے بھی مالک ہیں۔

سابق صدر کے بینک الفلاح، عسکری بینک، حبیب میٹروپولیٹن بینک، اسٹینڈرڈ چارٹرڈ بینک اور نیشنل بینک آف پاکستان میں اکاؤنٹس بھی موجود ہیں۔

SHARE

LEAVE A REPLY