کرم ایجنسی کی پولیٹکل انتظامیہ اور سکیورٹی ایجنسیز نے افغانستان کی سرحد سے دہشت گرد تنظیم داعش کے خود کش بمبار اور جنگجوﺅں کے ایجنسی میں داخل ہونے کی خبر کے بعد ریڈالرٹ جاری کردیا۔

جس کے بعد تمام تعلیمی ادارے بند کردیئے گئے اور قبائلی عوام کسی بھی ناخوش گوار واقعے سے نمٹنے کے لیے تیار ہوگئے۔پولیٹیکل انتظامیہ کے عہدیدار کا کہنا تھا کہ اطلاعات ملتے ہی انھوں نے مقامی افراد خصوصاً ان لوگوں کو جو افغان سرحدکے قریب ہیں مطلع کیا اور ان کے علاقوں میں سکیورٹی کو بڑھانے کی ہدایت کی۔ قبائلی عوام نے مساجد سے اعلان کرتے ہوئے حملوں کے خطرات سے آگاہ کردیا جس کے بعد مسلح رضاکاروں کو گھروں کی چھتوں اور شہر کے قریب بنکرز پر تعینات کردیا گیا ہے۔

کرم ایجنسی کے تعلیمی اداروں نے تین روز تک ایجنسی میں چھٹی کا اعلان کردیا۔نیشنل ایجوکیشن کونسل فاٹا کے صدر مرتضیٰ حسین نے حکومت سے مطالبہ کیا کہ وہ تعلیمی اداروں کے اندر اور اطراف میں فول پروف سکیورٹی کے اقدامات کرے۔اسسٹنٹ پولیٹیکل ایجنٹ شاہد علی خان کا کہنا تھا کہ شہر کے داخلی راستوں پر خندقیں کھود رہے ہیں جبکہ سکیورٹی ایجنسز گزرنے والے افراد اور ان کی گاڑیوں کی تلاشی بھی لیں گی۔

جابر حسین

SHARE

LEAVE A REPLY