وزیراعلیٰ سندھ نے وفاق اور سوئی سدرن گیس کو وارننگ دیتے ہوئے کہا ہے کہ اگر تیار شدہ پاور پلانٹ کو گیس نہ دی گئی تو گیس کی فراہمی بند کردیں گے ۔

سندھ اسمبلی میں تقریر کرتے ہوئے مراد علی شاہ نے شدید الفاظ میں وفاق اور سوئی سدرن گیس کمپنی پر تنقید کرتے ہوئے کہا کہ ہم نے کے الیکٹرک کے ساتھ معاہدہ کرتے ہوئے ٹرانسمیشن لائن ڈالی مگر وفاق کی جانب سے ہمیں گیس فراہم نہیں کی جارہی ہیں گزشتہ چار ماہ سے معاہدے میں قانونی معاملات پر ٹالا جا رہا ہے میں آج اس اسمبلی کی جانب سے سوئی سدرن اور وفاق کو وارننگ دے رہا ہوں کہ فی الفور پاور پلانٹ چلانے کے لئے ہمیں گیس فراہم کی جائے بصورت دیگر ہم گیس لائن بند کردیں گے اور سوئی سدرن گیس کمپنی کا کنٹرول سنبھالتے ہوئے ان کے دفاتر کو اپنی تحویل میں لے لیں گے اس موقع پر ایم کیو ایم اراکین اسمبلی نے بھی وزیراعلیٰ سندھ کے اس بیان کی تائید کی

مراد علی شاہ نے وفاق کے طرز عمل پر تنقید کرتے ہوئے کہا کہ پانی بجلی کی وفاقی وزارت دن دہاڑے جھوٹ بول رہی کہ وہ سندھ کو بجلی معمول کے مطابق فراہم کرر ہی ہیں مگر صورت حال اس کے برعکس ہے کہ سندھ کے اکثر علاقوں میں 20 گھنٹے کی لوڈشیڈنگ کی جارہی ہیں یہ صوبہ 70 فیصد گیس پیدا کرتا ہے قانون کے مطابق پہلی ترجیح اس صوبے کی ہے جس میں گیس آتی ہے لیکن وفاقی حکومت ہمیں گیس مہیا نہیں کر رہی۔

SHARE

LEAVE A REPLY