کراچی میں پاک سرزمین پارٹی کی ریلی کے شرکاء کو وزیراعلیٰ ہائوس جانے سے روکنے کے لئے پولیس نے شیلنگ ، واٹر کینن کا استعمال کیا اورمصطفیٰ کمال ،مرکزی قیادت اور 20سے زائد کارکنوں کو گرفتار کرلیا لیکن بعد میں انکو رہا کر دیا گیا۔

شارع فیصل پر عائشہ باوانی کالج کے سامنے پیپلز پارٹی کے وفد اور پی ایس پی کے مذاکرات ناکام ہونے کے تھوڑی دیر بعد پولیس نے ریلی کے شرکاء کو منتشر کرنے کے لئے ان پرشیلنگ کی جس سےعلاقے میں دھواں پھیل گیا،اس دوران پانی کی توپ بھی استعمال کی گئی۔

اس دوران پولیس اور پی ایس پی کارکنان کے درمیان آنکھ مچولی جاری رہی ،جس کا فائدہ اٹھاتے ہوئے مصطفیٰ کمال نے وزیراعلیٰ ہائوس کی جانب پیدل مارچ شروع کردیا ،اس دوران پی ایس پی سربراہ کو پولیس نے گرفتار کرلیا ۔

مصطفیٰ کمال نے اس موقع پر کہا کہ پولیس انہیں گرفتار کرکے کلا کوٹ تھانے لے گئی ہے،مجھے عوام کیلئے پانی مانگنے پر گرفتار کیا گیا ۔

پولیس نے پی ایس پی کے رہنما ڈاکٹر صغیر ،رضا ہارون ،انیس ایڈوکیٹ اور 20سے زائد کارکنوں کو گرفتار کیا جبکہ پارٹی کے صدر انیس قائم خانی گرفتار نہ کئے جاسکے۔

وفاقی وزیر داخلہ چوہدری نثار کی جانب سے پی ایس پی کی ریلی پر پولیس کی شیلنگ کی مذمت کی گئی

SHARE

LEAVE A REPLY