خلیجی ممالک نے قطری خاندانوں کے لیے ہاٹ لائن قائم کردی ہے

0
191

سعودی عرب، بحرین اور متحدہ عرب امارات نے قطری خاندانوں کے لیے ہاٹ لائن کے قیام کا اعلان کیا ہے۔ قطر کے ساتھ سفارتی اور ٹرانسپورٹ رابطے منقطع کر دیے جانے کے بعد بہت سے افراد سفر کرنے سے قاصر ہیں۔

یہ نہیں بتایا گیا ہے کہ اس ہاٹ لائن کے ذریعے متاثرہ خاندانوں کی کس طرح اور کس حد تک مدد کی جائے گی، تاہم اعلان میں کہا گیا ہے کہ یہ ہاٹ لائن انسانی بنیادوں پر امداد کے لیے قائم کی گئی ہے۔

ایمنسٹی انٹرنیشنل کے مطابق قطر کی ناکہ بندی کی وجہ سے کئی خاندان بٹ کر رہ گئے ہیں اور انہیں اشیائے خوردونوش کی قلت کے خدشات کا سامنا ہے

قطر اور اس کے ہمسایہ عرب ممالک کے درمیان کشیدگی کی وجہ سے قطر کے عوام کو شدید مشکلات کا سامنا ہے سعودی عرب نے اور اس کے حامی ممالک نے قطر کے شہریوں پر زمینی، ہوائی اور سمندری راستے بند کردیئے ہیں البتہ ایران نے قطر کو اپنی تین بندرگاہوں سے استفادہ کرنے کی اجازت دیدی ہے

ترکی کے صدر رجب طیب اردوغان نے قطر کے بحران کو مذاکرات کے ذریعہ حل کرنے پر تاکید کرتے ہوئے کہا ہے کہ ہم اپنے قطری بھائیوں کو تنہا نہیں چھوڑیں گے اور بحران کو حل کرنے کے سلسلے میں تمام متعلقہ ممالک کے ساتھ گفتگو کریں گے۔ ترک صدر نے کہا کہ خادم الحرمین کا عنوان رکھنے والوں کے لئے امریکہ کے ساتھ دوستی اور عرب و مسلمان ممالک کے ساتھ عداوت و دشمنی زیبا نہیں ہے۔

ترک صدر نے کہا کہ ترکی میں ناکام فوجی بغاوت پر کون سے ممالک خوشحال تھے ہمیں سب کچھ معلوم ہے اگر ان کے پاس انٹیلیجنس ادارے ہیں تو ہمارے پاس بھی خفیہ ادارے موجود ہیں۔ ترک صدر نے قطر کے خلاف پابندیوں کو ظالمانہ قراردیتے ہوئے کہا کہ ہم تمام پابندیوں کو فوری طور پر ختم کرنے کا مطالبہ کرتے ہیں اور ہم اپنے قطری بھائیوں کو تنہا نہیں چھوڑیں گے۔

SHARE

LEAVE A REPLY