کوئٹہ: پشین سٹاپ کے قریب دھماکہ، 17 افراد جاں بحق، درجنوں زخمی

0
85

بم ڈسپوزل اسکواڈ کا کہنا ہے کہ کوئٹہ کے علاقے پشین اسٹاپ پر ہونے والا دھماکاخودکش تھا۔

بم ڈسپوزل اسکواڈ نے کوئٹہ میں دھماکے کی جگہ کا معائنہ کیا جہاں شواہد کا جائزہ لینے کے بعد دھماکے کو خود کش قرار دیا۔

بم ڈسپوزل اسکواڈ کا مزید کہنا ہے کہ خودکش حملہ آور موٹرسائیکل پر سوار تھا،جبکہ دھماکے میں20 سے 25کلو بارودی مواد استعمال کیا گیا۔

کوئٹہ میں دہشتگردی کا ایک اور واقعہ، پشین سٹاپ کے قریب زور دار دھماکے کی آواز سنی گئی، 17 افراد جاں بحق، متعدد زخمی، مزید ہلاکتوں کا خدشہ۔

صوبائی دارالحکومت کے اولڈ پشین سٹاپ پر زوردار دھماکہ ہوا ہے جس کے نتیجے میں 17 جاں بحق اور متعدد افراد زخمی ہو گئے ہیں۔ ہلاک ہونے والے افراد کی لاشیں بری طرح جھلسی ہوئی ہیں۔ ایمبولنسز نے فوری طور پر موقع پر پہنچ کر زخمیوں کو سول ہسپتال کوئٹہ منتقل کرنا شروع کر دیا ہے۔ دھماکہ اس قدر شدید نوعیت کا تھا کہ اس کی آواز پورے شہر میں سنی گئی۔ دھماکے کے نتیجے میں کئی گاڑیوں کو بھی آگ لگ گئی۔ تاحال یہ معلوم نہیں ہو سکا کہ دھماکہ ریموٹ کنٹرول ڈیوائس سے ہوا یا اس خودکش تھا۔ تحقیقاتی ٹیمیں موقع پر پہنچ گئی ہیں اور انہوں نے تفتیش شروع کر دی ہے۔ دوسری جانب، قریبی ہسپتالوں میں ایمرجنسی نافذ کر دی گئی ہے۔

سکیورٹی فورسز کی جانب سے میڈیا کو جائے وقوعہ پر جانے سے روک دیا گیا ہے۔ پولیس نے علاقے کو گھیرے میں لے کر عام ٹریفک کو بھی پشین سٹاپ پر جانے سے روک دیا ہے۔ یاد رہے کہ پشین سٹاپ سے مختلف علاقوں کیلئے بسیں روانہ ہوتی ہے اور یہ شہر کا انتہائی مصروف مقام ہے۔ اس کے اردگرد کا علاقہ نہایت گنجان آباد ہے اور بلوچستان ہائیکورٹ اور بلوچستان اسمبلی سمیت دیگر اہم عمارات بھی جائے وقوعہ پر موجود ہیں۔

وزیر داخلہ بلوچستان نے دنیا نیوز سے بات کرتے ہوئے بتایا کہ دھماکہ بڑی نوعیت کا ہے اور شہر کو تھریٹ پہلے سے موجود تھا، جس کے بعد شہر میں ہائی الرٹ کر دیا گیا ہے اور تمام ڈاکٹروں کی چھٹیاں منسوخ کر دی گئی ہیں

SHARE

LEAVE A REPLY