وفاق کے زیر انتظام قبائلی علاقے (فاٹا) کی باجوڑ ایجنسی میں نامعلوم شرپسندوں نے پولیٹیکل تحصیلدار فواد علی کے قافلے کے قریب بم دھماکا کیا جس کے نتیجے میں پولیٹیکل تحصیلدار اور 4 لیویز اہلکار شہید ہوگئے۔

ڈان نیوز نے سیکیورٹی ذرائع کے حوالے سے رپورٹ کیا کہ باجوڑ ایجنسی میں لوئی میمند کے علاقے میں سڑک کنارے نصب ریموٹ کنٹرول بم کو دھماکے سے اڑا دیا گیا۔

ذرائع کے مطابق حملے میں پولیٹیکل تحصیلدار فواد علی گریگال کے علاقے کی جانب جارہے تھے کہ ان کی گاڑی کو دھماکے کا نشانہ بنایا گیا، جس کی زد میں آکر پولیٹیکل تحصیلدار اور ان کی سیکیورٹی پر مامور 4 لیویز اہلکار شہید ہوگئے۔
دھماکے کی اطلاع ملتے ہی سیکیورٹی فورسز موقع پر پہنچی اور لاشوں کو ایجنسی ہیڈکوارٹر ہسپتال منتقل کیا۔

علاوہ ازیں سیکیورٹی فورسز نے علاقے کو گھیرے میں لے کر سرچ آپریشن شروع کردیا۔

خیال رہے کہ دو روز قبل پاک-افغان سرحد پر طورخم کے مقام پر نصب گیٹ کے قرین ایک سیکیورٹی چیک پوسٹ پر گرینیڈ حملہ ہوا تھا جس میں 6 سیکیورٹی اہلکاروں سمیت 9 افراد زخمی ہوگئے تھے۔

واقعے کے بعد طورخم سرحد کو ہر قسم کی آمد و رفت کے لیے بند کردیا گیا تھا۔

گذشتہ روز پاکستان اور افغانستان کے عسکری اور سول حکام کے درمیان ہونے والی فلیگ میٹنگ کے بعد دونوں ممالک کے درمیان طورخم کے مقام پر بند سرحد کو دوبارہ کھول دیا گیا۔

SHARE

LEAVE A REPLY