نظام مصطفے متحدہ محاذ ” کے نام سے گرینڈ الائنس

0
162

سنی سیاسی و مذہبی جماعتوں نے ” نظام مصطفے متحدہ محاذ ” کے نام سے گرینڈ الائنس کا اعلان کر دیا ہے ۔ ایک ماہ کی عبوری مدت کے لئے عارضی طور پر سابق وفاقی وزیر صاحبزادہ سید حامد سعید کاظمی کو اتحاد کا کوآرڈینیٹر نامزد کیا گیا ہے جبکہ نظام مصطفے متحدہ محاذ کے منشور و دستور کی تیاری کے لئے پانچ رکنی کمیٹی قائم کی گئی ہے ۔ دستور کی منظوری اور آئندہ کے سیاسی لائحہ عمل کی تیاری کے لئے آئندہ اجلاس 20 نومبر کو ادارہ تعلیمات اسلامیہ راولپنڈی میں جماعت اہل سنت کی میزبانی میں ہو گا ۔ اتحاد میں شامل جماعتوں کے صدور و جنرل سیکریٹریز پر مشتمل مجلس شوری تشکیل دے دی گئی ہے ۔

اس بات کا فیصلہ دربار امیر ملت علی پور شریف کے سجادہ نشیں پیر سید منور حسین شاہ جماعتی کی میزبانی میں ایوان اقبال لاہور میں ہونے والے اہل سنت جماعتوں کے مشترکہ اجلاس میں کیا گیا ۔ اجلاس کے شرکاء میں سنی اتحاد کونسل کے چیئرمین صاحبزادہ حامد رضا ، جمعیت علماء پاکستان نورانی کے صدر صاحبزادہ ڈاکٹر ابو الخیر محمد زبیر ، جے یوپی کے صدر پیر اعجاز احمد ہاشمی ، صوبائی اسمبلی کے رکن پیر سید محفوظ شاہ مشہدی ، پاکستان سنی تحریک کے مرکزی راہنما شاہد غوری ، مرکزی جماعت اہل سنت کے امیر پیر میاں عبدالخالق ، مرکزی ناظم اعلی پیر سید محمد عرفان مشہدی ، نظام مصطفے پارٹی کے مرکزی سیکریٹری جنرل اور قومی اسمبلی کے سابق رکن محمد عثمان خان نوری ، جماعت اہل سنت پنجاب کے صدر مفتی محمد اقبال چشتی ، جے یو پی نیازی کے صدر پیر سید معصوم حسین نقوی ، تحریک فیضان اولیاء کے صدر پیر سید حبیب احمد عرفانی ، جماعت الصالحین کے صدر پیر خالد سلطان قادری ، قومی اسمبلی کے سابق رکن اور شرقپور شریف کے زیب سجادہ صاحبزادہ میاں جلیل احمد شرقپوری ، جمعیت مشائخ اہل سنت پاکستان کے صدر پیر سید غلام رضوانی جیلانی ، پاکستان فلاح پارٹی کے سیکریٹری جنرل امانت علی زیب ، بھکھی شریف کے سجادہ نشیں پیر سید نوید الحسن شاہ مشہدی ، مفتی طاہر تبسم قادری ، شاداب رضا نقشبندی ، میاں خالد حبیب الہی ایڈووکیٹ ، پیر سید مصطفے اشرف رضوی ، ڈاکٹر امجد چشتی ، محمد نواز کھرل شامل تھے ۔

اجلاس کے اعلامیہ میں کہا گیا ہے کہ یہ اتحاد نفاذ نظام مصطفے ، تحفظ ناموس رسالت ، استحکام وطن ، دہشت گردی کے خاتمے اور حقوق اہل سنت کے تحفظ کے لئے قائم کیا گیا ہے ۔ ” نظام مصطفے متحدہ محاذ ” کے پلیٹ فارم پر صوفیاء کے پیروکاروں کی شیرازہ بندی کر کے انتخابی سیاست میں اہم کردار ادا کیا جائے گا ۔ آئندہ الیکشن میں اہل سنت کا ووٹ تقسیم نہیں ہونے دیں گے ۔ اہل سنت سیاسی جماعتیں آئندہ الیکشن میں ” نظام مصطفے متحدہ محاذ ” کے پلیٹ فارم سے حصہ لیں گی ۔ الیکشن میں کسی بھی دوسری جماعت کے ساتھ سیٹ ایڈجسٹمنٹ کا فیصلہ اتحاد کی مجلس شوری کرے گی ۔ اعلامیہ میں واضع کیا گیا ہے کہ اہل سنت جماعتوں کا گرینڈ الائنس کسی حکومت یا کسی سیاسی شخصیت کے اشارے پر نہیں بنایا گیا بلکہ یہ اہل سنت جماعتوں کا اپنا فیصلہ ہے ۔ اجلاس میں فیصلہ کیا گیا کہ تحریک لبیک پاکستان اور تحریک لبیک یارسول اللہ کو اس اتحاد کا حصہ بنانے کی کوششیں جاری رکھی جائیں گی ۔ اعلامیہ میں مطالبہ کیا گیا ہے کہ حکومت ختم نبوت حلف نامہ میں ترمیم کے ذمہ داروں کے خلاف فوری کاروائی کرے ۔ وزیر قانون پنجاب کے قادیانیوں سے متعلق متنازعہ بیان پر شرعی تقاضے پورے کیئے جائیں ۔ وزیر اعظم دوٹوک اعلان کریں کہ قانون ناموس رسالت میں کوئی تبدیلی نہیں کی جائے گی ۔ عدالتوں سے سزا یافتہ گستاخان رسول کو پھانسیاں دی جائیں ۔

ملک میں نفاذ نظام مصطفے کا آئینی تقاضا پورا کیا جائے ۔ اجلاس کے اختتام پر پریس کانفرنس سے خطاب کرتے ہوئے نظام مصطفے متحدہ محاذ کے کوآرڈینیٹر صاحبزادہ سید حامد سعید کاظمی نے کہا کہ پاکستان بنانے والوں کی اولادیں پاکستان بچانے کے لئے میدان میں آ گئی ہیں ۔ اہل سنت نے لاشیں اٹھا کر بھی ہتھیار نہیں اٹھائے ۔ امن پسندی اہل سنت کی پہچان ہے اور اس شناخت کو مجروح نہیں ہونے دیں گے ۔ اہل حق کی صف بندی شروع ہو گئی ہے ۔ اہل سنت کو کسی کی جیب کی گھڑی اور ہاتھ کی چھڑی نہیں بننے دیں گے ۔ درود والوں کا دور آنے والا ہے ۔ ملک کے اکثریتی پرامن اور محب وطن مکتبہ فکر کو دیوار سے لگانے کی ہر سازش ناکام بنائیں گے ۔

این ایچ نقوی

SHARE

LEAVE A REPLY