سعودی حکومت کی جانب سے غیر ملکیوں کو اگلے سال سے سیاحتی ویزا دینے کا اعلان کیا گیا ہے۔
سعودی عرب اپنی معیشت میں بہتری لانے کے لیے نئے ذرائع تلاش کرنے میں مصروف ہے اور اسی لیےانہوں نے اگلے سال سے غیر ملکیوں کو سیاحتی ویزو جاری کرنے کا فیصلہ کیا ہے۔

اس سے قبل سعودی عرب جن غیر ملکیوں کو ویزا فراہم کر رہا تھا وہ مخص وہیں کے رہائشی اورکاروباری افراد تھےاس کے علاوہ خصوصی ویزے مسلمان حاجیوں کو مقدس مقامات کی زیارت اورحج کے لیےدیا جاتا رہا ہے لیکن سیاحتی ویزا آج تک کسی کو نہیں دیا گیا۔
سعودی کمشنر برائے سیاحت کے سربراہ پرنس سلطان بن سلمان بن عبدالزیز نے سی این این سے گفتگو کرتے ہوئے کہا کہ، ’ہمارا مقصد ان لوگوں کواپنی طرف راغب کرنا ہے جو سعودی عرب کا مکمل جائزہ لینے اور یہاں آنے میں دلچسپی رکھتے ہیں۔ ‘

ایک سوال کے جواب میں انہوں نے کہا کہ ’امید ہے 2018 میں ویزے فراہم کرنا شروع کر دئیے جائیں گے اور اس کے لیے آن لائن ٹیکنالوجی کا استعمال کیا جائے گا تاکہ زیادہ سے زیاوہ لوگوں کو یہاں آنے کا موقع مل سکے۔‘
پرنس سلطان نے مزید بتایا کہ ان کی کمیشن غیر ملکیوں کے لئے سیاحتی مقامات تیار کرنے پر بھی کام کر رہی ہے جبکہ ریڈ سمندر کے کنارے50 ریزورٹس تیار کرنے کے منصوبے کا بھی اعلان کیا گیا ہے جو کہ 2022 میں مکمل ہوگا۔

ولی عہد محمد بن سلمان کا کہنا ہے کہ ہمارا ملک ’ تیل کے برآمدات‘ پر بہت زیادہ انحصار کر رہا تھا جبکہ تیل کی قیمتوں میں کمی کے باعث سعودی معیشت کو خاصا نقصان ہوا ہے جس کو دور کرنے کے لیے نئی صنعتوں کو فروغ دینے کا فیصلہ کیا گیاہے۔
پچھلے دنوں سعودی حکومت کی جانب سے’ انتہائی سخت سماجی پابندیوں‘ کو کم کرنے کے اقدامات بھی اسی لیے کئے گئے تھے۔

SHARE

LEAVE A REPLY