سندھ ہائی کورٹ نے این ٹی ایس کیس کا فیصلہ سنا دیا، عدالت نے سابقہ نتائج برقرار رکھنے کا حکم دیتے ہوئے سندھ حکومت کا دوبارہ ٹیسٹ کرانے فیصلہ کالعدم قرار دے دیا۔
سندھ حکومت نے این ٹی ایس ٹیسٹ میں بدنظمی کے بعد دوبارہ انٹری ٹیسٹ کے انعقاد کا اعلان کیا تھا، جس کے بعد 150 سے زائد طلبہ اور والدین نے سندھ ہائی کورٹ سے رجوع کیا اور موقف اختیار کیا کہ وہ ٹیسٹ میں پاس ہو چکے ہیں، دوبارہ ٹیسٹ کیوں دیں۔
عدالت نے فریقین کے وکلا کے دلائل مکمل ہونے کے بعد آج فیصلہ سنایا۔عدالت نے کہا کہ کوئی فریق چاہے توسپریم کورٹ سے رجوع کرسکتا ہے۔
عدالتی احکامات کے بعد طلبہ نے کورٹ میں مٹھائیاں تقسیم کیں۔
طلبہ کا کہنا تھا کہ عدالتی فیصلے کا خیر مقدم کرتے ہیں، محنت کی تھی اس کا پھل مل گیا۔ انہوں نے کہا مستقبل میں ڈاکٹر بن کر قوم کی خدمت کریںگے۔
اس حوالے سے سیکریٹری صحت فضل اللہ پیچوہو کا کہنا ہے کہ عدالت نے مثبت فیصلہ دیا ہے، کمیٹی سے مشاورت کے بعد آئندہ لائحہ عمل کا اعلان کریںگے، سندھ حکومت نے این ٹی ایس کے نتائج کو روکنے کا نوٹیفکیشن جاری کیا تھا۔
واضح رہے کہ سندھ حکومت نے پروفیشنل تعلیمی اداروں میں داخلہ ٹیسٹ کا پرچہ آؤٹ ہونے کی اطلاعات پر امتحان دوبارہ لینے کااعلان کیا تھا

SHARE

LEAVE A REPLY