قطری شاہی خاندان کے ایک فرد شیخ عبداللہ بن علی الثانی نے مبینہ طور پر ایک ویڈیو جاری کی ہے جس کے مطابق انہیں متحدہ عرب امارات میں زبردستی روکا گیا ہے۔

قطر کے دیگر خلیجی ممالک کے ساتھ تنازعے کو حل کرانے میں بن علی الثانی ایک ثالث کا کردار ادا کرتے رہے ہیں۔

دوسری جانب متحدہ عرب امارات کی وزارت خارجہ کے ایک بیان میں شیخ عبداللہ کے ان الزامات کو مسترد کرتے ہوئے اس بات پر اصرار کیا گیا ہے کہ وہ اپنی ایماء اور مرضی سے ابوظہبی آئے تھے اور جب چاہیں جہاں چاہیں واپس جا سکتے ہیں۔

قطر کی وزارت خارجہ نے ایک بیان میں کہا ہے کہ دوحہ اس تمام معاملے پر گہری نظر رکھے ہوئے ہے۔

SHARE

LEAVE A REPLY