متحدہ اپوزیشن آج لاہور کے مال روڈ پر طاقت کا مظاہرہ کر رہی ہے

0
88

سانحہ ماڈل ٹاؤن پر عوامی تحریک آج لاہور میں احتجاج کے لئے تیار ہے اور متحدہ اپوزیشن کی دیگر جماعتوں کی پاور شو کیلئے بھی تیاریاں مکمل کر لی گئیں ہیں ۔ چیئرنگ کراس پر کنٹینر بھی لگ گیا ہے لیکن متحدہ پاکستان نے احتجاج میں شرکت نہ کرنے کا فیصلہ کیا ہے جبکہ پی ایس پی احتجاج میں شریک ہو گی ۔ دوسری جانب، لاہور میں مال روڈ اور اردگرد کے تمام تعلیمی ادرے آج بند رہیں گے۔ محکمہ سکولز پنجاب نے متحدہ اپوزیشن کے جلسہ کے باعث آج 6 سکولز بند کرنیکا حکم دیا ہے ۔ بند ہونے والے سکولز میں گورنمنٹ بوائز ہائی سکول گورنر ہاؤس اور گورنمنٹ گرلز ہائی سکول گورنر ہاؤس شامل ہیں ۔ اسلامیہ ہائی سکول خزانہ گیٹ ، فاطمہ گرلز سکول اور گورنمنٹ گرلز ہائی سکول شاہراہ ایوان تجارت بھی شامل ہیں ۔ سیکرٹری سکولز ڈاکٹر اللہ بخش ملک کے مطابق، جب تک مال روڑ پر احتجاج یا جلسہ رہیگا اس وقت تک سکولز بند رہیں گے۔ متحدہ اپوزیشن کے جلسے کے دوران کسی بھی ممکنہ مسئلے سے بچنے کیلئے رینجرز کو پنجاب اسمبلی، گورنر ہاؤس اور دیگر حساس مقامات پر تعینات کرنے کا فیصلہ کیا گیا ہے۔

پولیس کا سکیورٹی پلان تیار

مال روڈ پر احتجاج کیلئے پولیس نے سکیورٹی پلان تیار کر لیا۔ 3 ایس پیز، 8 ڈی ایس پیز، 34 ایس ایچ اوز سکیورٹی فرائض سرانجام دیں گے جبکہ ساڑھے 6 ہزار پولیس اہلکاربھی تعینات ہوں گے۔ ہنگامی صورتحال سے نمٹنے کیلئے جلسہ گاہ سے ملحقہ علاقوں کی ناکہ بندی ہوگی، جلسہ گاہ میں جانے کیلئے شرکاء کی 3 مقامات پر چیکنگ کی جائے گی، شرکا کے داخلے کیلئے 5 انٹری پوائنٹس رکھے گئے ہیں۔ پولیس پلان کے مطابق، خواتین قادری چوک سے جلسہ گاہ میں داخل ہوں گی، مرد شرکا استنبول چوک، جی پی اوچوک، ہال روڈ، ریگل چوک سے داخل ہوں گے، اہم سیاسی شخصیات الحمرا چوک سے اسٹیج کی طرف جائیں گی۔

شیخ رشید

سربراہ عوامی مسلم لیگ شیخ رشید کا کہنا ہے چوروں، لیٹروں، ڈاکوؤں کے خلاف احتجاج کا آج پہلا دن ہے، یہ احتجاج ان کیخلاف ہے جنہوں نے 9، 9 ارب داماد کو کابینہ سے دلوائے۔ انہوں نے کہا یہ لوگ سمجھتے ہیں کہ انہیں ملک میں چوری کا حق ہے، 5 ججوں کے فیصلے کو ٹوکری میں پھینکنے کا کہتے ہیں۔ سربراہ عوامی مسلم لیگ کا کہنا تھا یہ لوگ غیرملکی ایجنڈے پر پاک فوج کی تذلیل کر رہے ہیں، جب تک یہ قانون کی گرفت میں نہیں ہوں گے چین سے نہیں بیٹھیں گے۔
مصطفی کمال لاہور پہنچ گئے

سربراہ پاک سرزمین مصطفی کمال متحدہ اپوزیشن کے احتاج میں شرکت کرنے کے لئے لاہور پہنچ گئے، پارٹی کے رہنماؤں نے مصطفی کمال کا استقبال کیا، سربراہ پی ایس پی جلسے سے خطاب بھی کرینگے۔ اس موقع پر میڈیا سے گفتگو کرتے ہوئے انہوں نے کہا لاہور کے شہریوں پر ظلم ہوا، سانحہ ماڈل ٹاؤن پر کراچی کے شہریوں کو بھی دکھ ہوا، ظلم پر خاموش رہتے تو ظالموں کے ساتھی کہلاتے۔ ان کا کہنا تھا مظلوموں کی آواز بننے کیلئے لاہور آیا ہوں۔

طاہر القادری کا اعلان
ڈاکٹر طاہر القادری نے اپنی پریس کانفرنس میں کہا کہ لائحہ عمل کا فیصلہ کر لیا ہے، کل جو ہو گا، دنیا دیکھ لے گی، سلنطت شریفیہ کا جانا ٹھہر گیا ہے۔ احتجاج کے اگلے لائحہ عمل کا فیصلہ کر لیا گیا ہے، اب ہم استعفے مانگ نہیں رہے بلکہ ان کو دینے ہوں گے، کل سے شروع ہونے والے احتجاج پر کوئی پابندی نہیں۔

یہ بھی پڑھیں: کل ایک ہی سٹیج پر آصف زرداری اور عمران خان موجود ہوں گے: طاہر القادری

علامہ طاہر القادری نے مزید کہا کہ آصف زرداری سے آج رات ڈنر پر بات ہو گی، سنا ہے بلاول ہاؤس میں دال اور ساگ بہت اچھے ہوتے ہیں۔

اپوزیشن کی تیاریاں عروج پر، متحدہ پاکستان ناراض
سانحہ ماڈل ٹاؤن پر عوامی تحریک تو لاہور میں احتجاج کے لئے تیار ہے اور متحدہ اپوزیشن کی دیگر جماعتوں کی پاور شو کیلئے تیاریاں بھی عروج پر ہیں، چیئرنگ کراس پر کنٹینر بھی لگ گیا ہے لیکن متحدہ پاکستان نے احتجاج میں شرکت نہ کرنے کا فیصلہ کیا ہے جبکہ پی ایس پی احتجاج میں شریک ہو گی۔

SHARE

LEAVE A REPLY