اسرائیل نے غزہ کیلئے آنے والا امدادی بحری جہاز لوٹ لیا

0
344

مرکز اطلاعات فلسطین
اسرائیلی بحریہ نے فلسطین کے محصور علاقے غزہ کی پٹی کے لیے امدادی امدادی سامان لے کر آنے والے خواتین کے امدادی قافلے’زیتونہ‘ پر شب خون مارتے ہوئے اس پرقبضہ کر لیا ہے اور جہاز پرسوار اس کے عملے اور خواتین امدادی کارکنوں کو یرغمال بنا لیا گیا ہے۔

مرکزاطلاعات فلسطین کو ملنے والی اطلاعات میں بتایا گیا کہ رات گئے صہیونی بحریہ نے کھلے سمندرمیں غزہ کی طرف گامزن امدادی جہاز’زیتونہ‘ کا محاصرہ کیا۔ امدادی جہاز کو گھیرے میں لینے کے بعد اس میں سوار تمام خواتین سماجی اور سیاسی کارکنوں کر حراست میں لینے کے بعد نامعلوم مقام پر منتقل کر دیا گیا ہے جب کہ جہاز کو بھی کسی نامعلوم مقام کی طرف لے جایا گیا ہے۔

خیال رہے کہ چند روز قبل غزہ کی پٹی کا محاصرہ توڑنے کے لیے بین الاقوامی خواتین سماجی کارکنوں کی مساعی سے دو امدادی قافلے ’الزیتونہ‘ اور ’امل‘ غزہ کی طرف روانہ کیے گئے تھے۔ ان دونوں جہازوں پر 15 خواتین سوار ہیں۔

اطلاعات کے مطابق رات گئے اسرائیلی بحریہ نے امدادی جہاز الزیتونہ پر شب خون مارا اور جہاز کا سامان لوٹنے کے بعد امدادی جہاز اور اس پرسوار امدادی کارکنوں کو نامعلوم مقام پر منتقل کردیا گیا ہے۔ ان میں کئی عالمی شہرت یافتہ امن کارکنان اور نوبل انعام یافتہ خواتین بھی شامل ہیں

دوسری جانب انسانی حقوق کی تنظیموں اور فلسطینی سیاسی اور مذہبی حلقوں نے صہیونی بحریک کے اقدام کو بحری قذاقی قرار دیتے ہوئے اس کی شدید الفاظ میں مذمت کی ہے۔ اسلامی تحریک مزاحمت ’حماس‘ نے صہیونی فوج کے اقدام کو بحری دہشت گردی اور بحری قذاقی قرار دیا ہے۔

حماس کی جانب سے جاری ایک بیان میں الزیتونہ امدادی قافلے پر اسرائیلی فوج کے شب خون کی شدید الفاظ میں مذمت کرتے ہوئے عالمی برادری سے مطالبہ کیا ہے کہ وہ امدادی کارکنوں کو تحفظ فراہم کرنے اور امدادی سامان غزہ تک پہنچانے کے لیے اپنی ذمہ داریاں پوری کریں۔

عالمی مہم برائے انسداد معاشی ناکہ بندی کی جانب سے جاری کیے گئے ایک بیان میں بھی امدادی جہاز پر اسرائیلی فوج کے حملے کو بحری قذاقی اور منظم ریاستی دہشت گردی قرار دیا گیا ہے۔

عوامی محاذ کی جانب سے اپنے رد عمل میں کہا گیا ہے کہ امدادی جہاز پر اسرائیلی فوج کی جارحیت سے عالمی برادری کو پیغام پہنچ گیا ہے کہ صہیونی ریاست ایک سازش کے تحت غزہ کی پٹی کے لاکھوں لوگوں کو محاصرے سے دوچارکرنا چاہتی ہے۔ فلسطینی سیاسی جماعتوں نے آج جمعرات کو ملک کے طول عرض میں امدادی جہاز پراسرائیلی قبضے کے خلاف منظم احتجاج کرنے کا بھی اعلان کیا ہے۔

SHARE

LEAVE A REPLY