وزیر اعظم شاہد خاقان عباسی اور اپوزیشن لیڈر خورشید شاہ کے درمیان نگراں وزیر اعظم کے نام پر اتفاق کرلیا گیا ہے، تاحال دونوں جانب سے نام بتانے سےگریز سامنے آیا ہے۔

ذرائع کے مطابق نگراں وزیر اعظم کی تعیناتی کے معاملے پر حکومت اور اپوزیشن نے متفقہ نام پر اتفاق کر لیا ہےجبکہ نگراں کابینہ کے حوالے سے مشاورتی عمل جاری ہے۔

ذرائع نے مزید کہا کہ ن لیگ نے پنجاب میں نگراں وزیر اعلی کےلیے بھی پیپلزپارٹی سے رائے مانگی ہےجبکہ وزیر اعظم اور اپوزیشن لیڈر پنجاب، سندھ اور بلوچستان کی نگراں وزرات اعلی پر بھی مشاورت کر رہے ہیں۔

اس موقع پر خورشید شاہ سے ایک سوال کیا گیا کہ نگراں وزیر اعظم چھوٹے صوبوں سے ہو گا جس کے جواب میں خورشید شاہ نے کہا کہ صوبے کا بتا دیا تو باقی کیا بچے گا۔

اپوزیشن لیڈر سے ایک اور سوال کیا گیا کہ نگراں وزیر اعظم کوئی خاتون ہو گی یا مرد ، جس پر اپوزیشن لیڈر نے کہا کہ نگراں وزیر اعظم کے لیے جنس کی پابندی نہیں دونوں ہو سکتے ہیں۔

خورشید شاہ سے سوال یہ بھی سوال کیا گیا کہ میڈیا پر جو نام چل رہے ہیں کیا ان میں کوئ نام ہےتو انہوں نے جواب میں کہا کہ ضروری نہیں کہ جو نام فائنل ہو رہا ہے اس کامیڈیا پر بھی چرچا ہو ۔

انہوں نے مزید کہا کہ ہماری کوشش ہے کہ متفقہ طور پر غیر متنازعہ شخص کو وزیر اعظم لگایا جائے،صحافیوں کے ساتھ رہ رہ کر اب میں نے بہت کچھ سیکھ لیا ہےتاہم منگل کو وزیر اعظم سے ملاقات کے بعد چیمبر میں آپ سب کے سامنے نگراں وزیر اعظم کے نام کا اعلان کروں گا۔

SHARE

LEAVE A REPLY